شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / پاکستان / حکومت کاشہبازشریف کو چیئرمین پی اے سی کے عہدے سے ہٹانے کافیصلہ

حکومت کاشہبازشریف کو چیئرمین پی اے سی کے عہدے سے ہٹانے کافیصلہ

اسلام آباد(پاک نیوز) حکومت نے شہباز شریف کو پبلک اکاؤئنٹس کمیٹی کے چیئرمین شپ سے ہٹانے کا اصولی فیصلہ کرلیا ہے جس کے بعد اختر مینگل کا ووٹ نہایت اہمیت اختیار کرگیا ہے۔ذرائع کے مطابق حکومت نے فخر امام کو نیا چیئرمین پی اے سی بنانے کا اصولی فیصلہ کیا ہے، اس ایجنڈے پر عمل درآمد کے لئے پبلک اکاؤئنٹس کمیٹی کے پندرہ ارکان جو کہ حکومت اور اتحادیوں کے ہیں، اسپیکر قومی اسمبلی کو خط لکھیں گے، جس میں وہ شہباز شریف پر عدم اعتماد کا اظہار کرینگے۔پبلک اکاؤئنٹس کمیٹی میں وزیر خزانہ سمیت تیس ارکان شامل ہیں،پارلیمانی طریقہ کار کے مطابق چیئرمین پی اے سی کو ہٹانے کیلئے سادہ اکثریت درکار ہوگی جبکہ حکومت کے پاس پندرہ اور اپوزیشن اتحاد کے پاس چودہ ووٹ ہے، تاہم حکومت کے لئے مشکل یہ ہے کہ وزیر خزانہ کے پاس چیئرمین کے تقرر اور ہٹانے کے ووٹ کا اختیار نہیں ہے۔اگر پارٹی پوزیشن سے موازنہ کیا جائے تو حکومتی اتحاد میں پی ٹی آئی کے 11،(ق) لیگ،ایم کیو ایم اور بی این پی کا ایک ایک ووٹ ہے، جبکہ آزاد رکن علی نواز شاہ حکومت کے حامی ہے، مگربلوچستان نیشنل پارٹی صوبہ بلوچستان کے لئے مرتب کئے گئے چھ نکاتی فارمولے پر عملدرآمد نہ ہونے پر حکومت سے ناراض ہیں ، اس سارے معاملے میں اختر مینگل کا ووٹ نہایت اہمیت اختیار کرگیا ہے کیونکہ اختر مینگل کی حمایت کے بغیر شہباز شریف کو ہٹانا ممکن نہیں ہے۔دوسری جانب اپوزیشن اتحاد میں نون لیگ کے سات، پیپلز پارٹی کے پانچ ، جے یو آئی اور ایم ایم اے کا ایک ایک ووٹ شامل ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ حکومت نے اختر مینگل سے رابطے کا فیصلہ کیا ہے اور بلوچستان کے چھ نکاتی فارمولے پر بھرپور عملدرآمد کی یقین دہانی کرائی جائے گی تاکہ شہباز شریف کو پبلک اکاؤئنٹس چیئرمین سے ہٹایا جاسکے

یہ بھی پڑھیں  اوکاڑہ : ٹیچر ڈے کے موقع پر ٹی ایم اے ہال میں سلام ٹیچر ڈے کی تقریب