تازہ ترینعلاقائی

بہاولنگر:عوام سرائیکی صوبہ کے پی پی پی کے نعرے کو بری طرح رد کر چکے ہیں ،چوہدری غلام مرتضی

ہارون آباد(بیو رو چیف)صوبائی صدر مسلم لیگ (ضیاء)وسابق ایم پی اے ہارون آباد چوہدری غلام مرتضی نے کہا ہے کہ موجودہ حکمران جھوٹے نعروں اور سبز باغوں کی سیاست کے ذریعے اپنی ڈوبتی ناؤ کوبچا نہیں سکتے قوم با شعور ہے اور پی پی پی کے محض نعروں اور تعصب پر مبنی سیاست کو بخوبی سمجھ چکی ہے ۔پی پی پی گزشتہ 42سال میں کئی مرتبہ اقتدارمیں آئی ہے مگر انہوں نے ہمیشہ عوام کو ہمدردی کے ووٹ کے ذریعے دھوکہ دیا ہے لیکن اب دھوکے اور فریب کی سیاست نہیں چل سکتی ۔انہوں نے کہاقوم سراپا سوال ہے کہ پی پی پی نے رداری کی قیادت میں قوم کو پانچ سال میں کیا دیا ہے ؟لوڈشیڈنگ بیس سے بائیس گھنٹے ،مہنگائی کا سینڈ ی طوفان تین سو فیصد ہولناک بنا دیا ہے اور اور چاروں طرف فاقوں ،ڈاکے،دھماکے اور خود کشیاں ہیں اور پھر بھی کبھی عوام کو آئینی ترامیم کی باتیں کرکے بہلایا جارہاہے ۔چوہدری غلام مرتضی نے کہاکہ علاقہ ہارون آباد سمیت ضلع بہاولنگر کے عوام سرائیکی صوبہ کے پی پی پی کے نعرے کو بری طرح رد کر چکے ہیں اور پی پی پی کو پنجاب کو ٹکڑے ٹکڑے کرنے کی سازش کو بے نقاب کر ے اس کو سبق سکھانے کا عزم رکھتے ہیں لیکن پھر بھی لسانی تعصب پھیلا کر ہارون آباد کے عوام کو گمراہ کرنے کی کوششیں قابل مذمت ہیں ہم تنگ نظر نہیں ہیں اور کسی بھی لسانی تعصب کا سوچ بھی نہیں سکتے ۔انہوں نے کہا کہ ہارون آباد میں سوئی گیس کا منصوبہ ہمارے گزشتہ دور حکومت کے زمانے کامنظور کردہ ہے اور ہمیں اگلے الیکشن میں محض پروپیگنڈہ اور سبز باغوں کے ذریعے ہروایانہ جاتا تو آج سے چار سال قبل ہی ہر گھر میں سوئی گیس چل رہی ہوتی مگر حیرت کی بات ہے کہ چار سال تک ہارون آباد کو سوئی گیس سے محروم رکھنے والے اب اس کو الیکشن سٹنٹ کے طور پر پیش کر رہے ہیں مگر ہارون آباد کی عوام اب ان کے جھانسے میں نہیں آئیں گے۔

یہ بھی پڑھیں  ریلوئے انتظامیہ نے عدالتی احکامات پر سکھر اسٹیشن کے سامنے قائم ریسٹورنٹ سیل کردیا

یہ بھی پڑھیے :

One Comment

  1. ڄناب صدر صاحب تے گورنر کھوسہ صاحب!
     
     
    ١۔اسلام آباد تے کراچی وچ اردو یونی ورسٹی ھے پئی۔ہک سرائیکی میڈیم :سرائیکی یونیورسٹی برائے صحت انجینئرنگ تے سائنس آرٹس ٻݨاؤ جیندے کیمپس ہر وݙے شہر وچ ھوون۔.
     
     
    ٢۔  تعلیمی پالسی ڈو ھزار نو دے مطابق علاقائی زباناں لازمی مضمون ھوسن تے ذریعہ تعلیم وی ھوسن۔ سرائیکی بارے عمل کرتے سرائیکی کوں سکولاں کالجاں وچ لازمی کیتا ونڄے تے ذریعہ تعلیم تے ذریعہ امتحان بݨاؤ۔
     
     
    ٣۔ پاکستان وچ صرف چار زباناں سرائیکی سندھی پشتو تے اردو کوں قومی زبان دا درجہ ڈیوو.۔
     
     
    ۔٤۔ نادرا سندھی اردو تے انگریزی وچ شناختی کارݙ جاری کریندے۔ سرائیکی وچ وی قومی شناختی کارڈ جاری کرے۔
     
     
    .٥۔ ھر ھر قومی اخبار سرائیکی سندھی تے اردو وچ شائع کیتا ونڄے۔کاغذ تے اشتہارات دا کوٹہ وی برابر ݙتا ونڄے
     
     
    ٦۔ پاکستان دے ہر سرکاری تے نجی ٹی وی چینل تے سرائیکی، سندھی، پشتو ، پنجابی،بلوچی تے اردو کوں ہر روز چار چار گھنٹے ݙتے ونڄن۔
     
     
    ٧۔سب نیشنل تے ملٹی نیشنل کمپنیاں سرائیکی زبان کوں تسلیم کرن تے ہر قسم دی تحریر تے تشہیر سرائیکی وچ وی کرن۔
     
     
    ٨۔۔سرائیکی ہر ملک وچ وسدن ایں سانگے سرائیکی ہک انٹر نیشنل زبان اے۔ سکولاں وچ عربی لازمی کائنی ، تاں ول انگریزی تے اردو دے لازمی ھووݨ دا کیا ڄواز اے؟
     
    ٩۔ دوائیاں تے سرائیکی وچ ناں ،فائدے تے طریقہ استعمال کائنی لکھے ھوندے۔ غلط استعمال نال کائی انسان مر وی ویندن۔ سرائیکی وسیب وچ اردو انگریزی دی شرح تعلیم ٻہوں گھٹ اے۔ لوک  قرآن تے قرآنی لکھائی نال مانوس ھن۔  سرائیکی الف بے نال لکھی ویندی اے۔ دوائیاں تے دوائی دا ناں فائدے تے ورتݨ دا ݙا سرائیکی زبان  وچ وی لکھیا کرو۔

  2. ١۔اسلام آباد تے کراچی وچ اردو یونی ورسٹی ھے پئی۔ہک سرائیکی میڈیم :سرائیکی یونیورسٹی برائے صحت انجینئرنگ تے سائنس آرٹس ٻݨاؤ جیندے کیمپس ہر وݙے شہر وچ ھوون۔.
     
     
    ٢۔  تعلیمی پالسی ڈو ھزار نو دے مطابق علاقائی زباناں لازمی مضمون ھوسن تے ذریعہ تعلیم وی ھوسن۔ سرائیکی بارے عمل کرتے سرائیکی کوں سکولاں کالجاں وچ لازمی کیتا ونڄے تے ذریعہ تعلیم تے ذریعہ امتحان بݨاؤ۔
     
     
    ٣۔ پاکستان وچ صرف چار زباناں سرائیکی سندھی پشتو تے اردو کوں قومی زبان دا درجہ ڈیوو.۔
     
     
    ۔٤۔ نادرا سندھی اردو تے انگریزی وچ شناختی کارݙ جاری کریندے۔ سرائیکی وچ وی قومی شناختی کارڈ جاری کرے۔

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker