پاکستانتازہ ترین

نیب کا حکم میرے لیے حکم الہی نہیں کہ اسے فوری تسلیم کرلوں،رحمن ملک

rehmanاسلام آباد(بیوروچیف) وفاقی وزیر داخلہ رحمٰن ملک نے کہا ہے کہ توقیر صادق کو فرار کرانے اور دبئی میں رہاکرانے میں میرا کوئی کردارنہیں اورنہ ہی نیب میرے خلاف کوئی ریفرنس بنا رہا ہے۔ نیب کا حکم میرے لیے حکم الہی نہیں کہ اسے فوری طور پر تسلیم کر لوں،کسی کا نام ای سی ایل میں ڈالنے سے قبل ٹھوس شواہد کی ضرورت ہوتی ہے۔ نادرا ہیڈ کوارٹرز کے دورے کے موقع پرمیڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے کہا 19 جنوری 2012ء کو توقیر صادق کی فائل میرے پاس آئی اور اسی روز اس کا نام ای سی ایل میں ڈال دیا، وہ کسی بھی فضائی راستے سے بیرون ملک نہیں گیا اس نے فرارکیلیے غیر قانونی طریقہ استعمال کرتے ہوئے زمینی راستہ استعمال کیا اس لیے ذمے داری کسی پر عائد نہیںہوتی، دبئی میں اس کا سراغ لگاکراسے زیر حراست رکھا گیا تاہم دبئی حکومت نے اسے چھوڑ دیا، اس کی رہائی سے متعلق معلومات اکٹھی کر رہے ہیں۔ توقیر صادق کو فرار کرانے اور اسکی تقرری میں میراکوئی کردار نہیںاگر کوئی میرا عمل دخل ثابت کر دے تو سیاست سے مستعفی ہو جائونگا۔ توقیر صادق سے متعلق جہانگیر بدر نے کبھی سفارش نہیں کی۔ کسی کا نام ای سی ایل میں ڈالنا میرا اختیار ہے۔ انھوں نے کہا مجھے دبائو میں لانے کی کو شش کی جا رہی ہے، سپریم کورٹ میں توقیر صادق کا کیس شروع ہونے سے قبل کسی نے یہ ماڈل بنایا تھا کہ آج کا دن رحمٰن ملک کے نام ہو گا اس لیے میرے خلاف ٹکر چلوائے گیے۔

یہ بھی پڑھیں  سابق چیف جسٹس سمیت چار ججوں کیخلاف دائر ریفرنس واپس

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker