تازہ ترینعلاقائی

نوشہرہ کینٹ،ملٹری پولیس کے مبینہ تشدد سے طالبعلم کی ہلاکت کے خلاف بچوں کا احتجاجی مظاہرہ

nowsheraنوشہرہ کینٹ (مانیٹرنگ سیل)نوشہرہ رسالپور چھاونی میں چوری کے مبینہ الزام میں زیر حراست کلاس نہم کے چودہ سالہ طالبعلم حامد خان کی ملٹری پولیس کے ہاتھوں ہلاکت کے خلاف مقتول کے کلاس فیلوز سمیت دیگر اسکولوں کے بچوں نے شدید گرمی میں جی ٹی روڈ پر شدید احتجاجی مظاہرہ کیا۔چھٹی کے بعد سکول کے بچوں نے ہاتھوں میں پلے کارڈز آٹھا رکھے تھے اور طالبعلم کی ھلاکت میں ملوث ملڑی اہلکاروں کے خلاف شدید نعرہ بازی کررہے تھے۔مشتعل بچوں نے رسالپور چھاونی گیٹ نمبر تین پر احتجاج کیا اور دھرنا دیااور قاتلوں کی گرفتاری کا مطالبہ کیا۔مشتعل بچوں نے احتجاجی مظاہرے میں کہا کہ اگر ان کے کلاس فیلو حامد خان کے قاتلوں کو گرفتار کرکے قرار واقعی سزا نہیں دی گئی تو وہ چیف جسٹس افتخار چودھری کو ملٹری کواٹرگارڈ میں زیر حراست چودہ سالہ طالبعلم حامد خان کی ھلاکت پر سوموٹو ایکشن لے۔مظاہرے کے دوران مقتول کے کلاس فیلوز اور سکول کے بچے زاروقطار رورہے تھے۔تفصیلات کے مطابق نوشہرہ رسالپور چھاونی میں چوری کے مبینہ الزام میں زیر حراست کلاس نہم کے چودہ سالہ طالبعلم حامد خان کی ھلاکت کے خلاف منگل کے روزمقتول کے کلاس فیلوز سمیت دیگر اسکولوں کے سیکڑوں بچوں نے مقتول کے تعلمی ادارے اسلامیہ پبلک سکول رسالپور سے احتجاجی مظاہرہ شروع کیا جوکہ رسالپور کے مختلف بازاروں سے ہوتا ہوا مین روڈ بس سٹاپ پر احتجاجی بچوں کے جلوس میں سرکاری اور نجی تعلمی اداروں کے بچوں بھی شریک ہوئے۔بچوں کا احتجاجی جلوس جی ٹی روڈ سے ہوتا ہوا پاکستان آرمی انجنیئرسینٹرز کے مین گیٹ نمبر تین پر پہنچا اور مشتعل بچوں نے جی ٹی روڈ کو دونوں اطراف سے ہرقسم کی ٹرائفک کے لیے بلاک کردیااور پاکستان آرمی انجنیئرسینٹرز کے مین گیٹ نمبر تین پر شدید نعرہ بازی کی اور حامد خان کے قتل کے مقدمہ میں ملوث فوجی اہلکاروں کو جلد از جلد گرفتارکرنے کا مطالبہ کیا۔

یہ بھی پڑھیں  اورنج لائن منصوبے کے سیاسی مخالفین کو منہ کی کھانا پڑی،شہباز شریف

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker