بین الاقوامیتازہ ترین

ہمیں انتہا پسندی کو اسلام کے ساتھ نہیں جوڑنا چاہئے: باراک اوبامہ

واشنگٹن (مانیٹرنگ سیل)امریکی صدر باراک اوبامہ نے کہا ہے کہ انتہا پسندی صرف اسلام کے ساتھ مخصوص نہیں بلکہ عیسائیت سمیت دیگر مذاہب میں انتہا پسندی کی جڑیں موجود ہیں، واشنگٹن میں فوجی دعائیہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صدر اوبامہ نے کہا کہ صرف اسلام ہی واحد مذہب نہیں ہے جس کو انتہا پسند اپنے مقاصد کیلئے استعمال کر رہے ہیں بلکہ دیگر مذاہب میں بھی ایسا ہو رہا ہے انہوں نے کہا کہ صلیبی جنگوں کے دوران لوگوں نے عیسائیت کے نام پر حق بجانب تھی انہوں نے کہا کہ ہمیں انتہا پسندی کو اسلام کے ساتھ نہیں جوڑنا چاہئے بلکہ دیگر مذاہب میں بھی موجود ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم یہ دیکھتے ہیں کہ مذہب ہمیں سدھے راستے پر چلانے کی ترعیب دیتا ہے تاہم بعض اوقات ہم یہ بھی دیکھتے مذہب کو بطور ہتھیار استعمال کر کے توڑ مروڑ کر پیش کیا جاتا ہے انہوں نے القاعدہ اور اسلامک اسٹیٹ جیسے گروپوں کو ظالم اور وحشیانہ قرار دیا کہ جس کے اراکین نے اقلیتوں کو دبایا اور مذہب نام پر خواتین کی آبرو ریزی کی امریکی صدر نے کہا کہ اسلامی دنیا میں انتہا پسند لوگوں کو تقسیم کرنے کیلئے مذہب کو بطور ہتھیار استعمال کر رہے ہیں انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ایک سکول سے لے کر پیرس کی گلیوں تک ایسا تشدد ان لوگوں کی جانب سے دیکھا جو خود کو اسلام سے جڑا سمجتے ہیں بلکہ حقیقت میں وہ اسے دھوکا دے رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button