پاکستانتازہ ترین

اوگرا بھی سی این جی بحران کی ذمہ دار ہے

اسلام آباد(مانیترنگ سیل) پیٹرولیم اور قدرتی وسائل کے لیے وزیراعظم پاکستان کے مشیر ڈاکٹر عاصم حسین نے کہا ہے کہ ملک میں سی این جی بحران کی ذمہ داری بہت حد تک تیل اور گیس کے ریگولیٹری اتھارٹی، اوگرا پر عائد ہوتی ہے اوگرا میں بہت جلد اصلاحات کی جائیں گی۔ان کا کہنا تھا کہ ’میری یہ سوچی سمجھی رائے ہے کہ اوگرا اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے میں ناکام رہا ہے۔ یہ ادارہ اپنی حساس اور اہم ذمہ داریاں چھوڑ کر سی این جی کی قیمت طے کرنے کے چکر میں پڑگیا اور اپنا اصل کام کرنے میں ناکام رہا ہے‘۔ ڈاکٹر عاصم حسین نے کہا کہ ان کی رائے میں تیل اور گیس کا ریگولیٹری ادارہ اوگرا اور پانی و بجلی کا ذمہ دار ادارہ نیپرا دونوں ان دونوں شعبوں میں خرابیوں کی بنیاد ہیں۔ ’اوگرا اور نیپرا بدقسمتی سے اپنے شعبوں میں پیدا ہونے والی تمام برائیوں کی جڑ ہیں‘۔ ڈاکٹر عاصم حسین نے کہا کہ اوگرا حکومت کی بات نہیں مانتی اور اس شعبے کے لیے وضع کردہ پالیسی کے خلاف اقدامات میں ملوث ہے۔ ’اس کے اجلاس غیر آئینی ہیں کیونکہ ان میں کورم نہیں ہوتا اور دو ارکان بیٹھ کر فیصلے کرتے رہتے ہیں‘۔ سی این جی سیکٹر میں بحران کی اصل وجہ گیس کی عدم دستیابی ہے:عاصم حسین ڈاکٹر عاصم نے کہا کہ وہ اس ادارے میں اصلاحات لانے کے لیے ایک منصوبہ بنا رہے ہیں جس پر عمل کر کے اس ادارے کو درست راہ پر لایا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سی این جی سیکٹر میں بحران کی اصل وجہ گیس کی عدم دستیابی ہے۔ ’ہم اس کمی کو مد نظر رکھتے ہوئے سی این جی اسٹیشن مالکان سے کہیں گے کہ وہ ایک ہزار سی سی سے بڑی صرف پبلک ٹرانسپورٹ گاڑیوں کو گیس دیا کریں‘۔انہوں نے کہا کہ گیس کی کمی کو درآمدی گیس سے پورا کیا جائے گا جس کے لیے ایران اور دیگر ممالک سے بات چیت جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایران کے ساتھ گیس کی قیمت کے تعین پر اختلاف ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا مطالبہ ہے کہ ایران ہمیں اسی نرخ پر گیس فروخت کرے جس نرخ پر تاجکستان دینے پر تیار ہے۔ ان کے مطابق ’ایران کو ہمارا یہ مطالبہ بلآخر ماننا ہی پڑے گا‘۔

یہ بھی پڑھیں  اوکاڑہ:پیپلزپارٹی(ن)لیگ کی بڑھتی ہوئی مقبولیت سے خوفزدہ ہے،میاں منیر

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker