پاکستان

اوگرا میں 52 ارب روپے کے فراڈ کی تفتیش شروع

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) نیب نے اوگرا میں باون ارب روپے کے فراڈ کی تفتیش شروع کر دی ہے۔ ذرائع کے مطابق اوگرا کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹرز، ممبر فائنانس اور سابق چئیرمین اوگرا سےتفتیش کی جارہی ہے۔اوگرا میں گیس چوری میں معاونت اور غیر قانونی سی این جی لائسنسوں کے اجرا کا فراڈ ثابت ہوا تھا۔ اوگرا کے سابق چئیرمین توقیر صادق پر پچپن افراد کی غیر قانونی بھرتیوں اور وکلا کو ڈیڑھ کروڑ روپے سے زائد رقم فیس کی مد میں ادا کرنے کا بھی الزام ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ توقیر صادق نے بروکروں کو فائدہ دے کر صارفین پر چھتیس ارب روپے کا بوجھ ڈالا۔ اوگرا کے ممبر فائنانس نے غیر قانونی سی این جی لائسنس جاری کئے اور تیس سے چالیس لاکھ روپے فی سی این جی لائسنس وصول کئے گئے۔ ذرائع نے یہ بھی بتایا ہے کہ توقیر صادق نے ممبر فائنانس کی مدت ملازمت میں چار سال کی توسیع بھی کر ائی۔ توسیع کا اختیار صرف وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے پاس ہے۔

یہ بھی پڑھیں  گیلانی کے اقدامات کی توثییق کا بل قومی اسمبلی میں منظور

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker