تازہ ترینعلاقائی

اوکاڑہ : عورت نام ہی عزت احترام ،وفا،خودداری اور حیاء کا ہے . مس شازیہ اقبال ، مس صائمہ رشید ، ڈاکٹر تسنیم جبار

اوکاڑہ(بیورورپورٹ) خواتین کا عالمی دن منانے کا اصل مقصد عورت کو وہ مقام یاد دلانا ہے جو دین اسلام نے آج سے 1438سال پہلے دیا تھا ،عورت کو اپنے فرائض کی ادائیگی کے بعد اپنے حقوق کے لیے لڑنا ہو گا ،ملکی قوانین میں عورت کے حقوق کا مکمل خیال رکھا گیا ہے جس کے لیے عورت کو آگہی کی ضرورت ہے،ونی ،کاروکاری ،قرآن سے شادی،وٹہ سٹہ کی شادی جیسی رسمیں عورتوں کے اسلامی حقوق حاصل کرنے میں اصل رکاوٹ ہیں ،ہمیں مردوں سے زیادہ کے حقوق نہیں چاہیں بلکہ انکے ساتھ مل جل کروطن عزیز کی بقا سلامتی اور معاشی صورتحال کو بہتر بنانا اور خاص طور پر اپنے خاندان کے لیے قابل فخر بننا ہے ان خیالات کا اظہار خواتین کے عالمی دن کے موقع پر سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کیا سیمینار کا انعقاد الخدمت ویلفیئر کونسل رینالہ خورد ،قومی وسماجی تحریک "ماڈا ” اوکاڑہ ،ایف ایم 92،این جی اوز کلب ،رینالہ نیوز نے کیا تقریب کی مہمان خصوصی ڈویژنل آفیسر لٹریسی مس شازیہ اقبال ،معروف سماجی ورکر وخواتین وکلاء رہنما مس صائمہ رشید ،ڈاکٹر تسنیم جبار تھیں جبکہ مہمانان اعزازمیں اوکاڑہ کی پہلی خواجہ سراء خاتون ٹیچر نایاب ،شاعرہ شبانہ زیدی ،پرنسپل ڈس ابیلٹی سکول تھری ریمینگ مس انیلا طارق تھیں کمپیئرنگ کے فرائض معروف سماجی ورکر و ایف ایم 92کے کمپیئرسید ندیم جعفری نے ادا کیے اور تمام معززخواتین کو آٹھ مارچ کے عالمی دن کے موقع پر سلام پیش کیا تقریب میں مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی خواتین کی کثیر تعداد کے علاوہ این جی اوز کے نمائندوں صحافیوں محمد مظہررشید چوہدری ،عتیق گوہر ،طارق نوید ،شاہدلطیف چوہدری ،غلام مصطفی مغل اور نویدفلیکس والے محمد نوید موجود تھے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مس صائمہ رشید ایڈووکیٹ نے کہا کہ عورت نام ہی عزت احترام ،وفا،خودداری اور حیاء کا ہے معاشرہ میں خواتین کو خودمختار بنائے بغیر ترقی کا خواب شر مندہ تعبیر نہیں ہو سکتا ہمیں خواتین کو ان کا معاشرے میں جائز مقام دلوانے کے لئے شعور و آگاہی کے سلسلے کو آگے بڑھانا ہے۔مس شازیہ اقبال نے کہا کہ ہر خاتون کو اپنے عورت ہونے پر فخر ہونا چاہیے تاکہ یہ ماں ،بہن ،بیٹی اور بیوی کے روپ میں اپنے خاندان کے لئے اہم ترین ہے خواتین کو خود مختار بنانے کے لئے انہیں زیور تعلیم سے آراستہ کرنا انتہائی ضروری ہے تاکہ وہ باشعور ہو کر اپنی زندگی کے معاملات سے متعلق فیصلے خود کرنے کے قابل ہو سکیں ایک خود اعتماد ماں خود اعتمادی کا جوہر اپنے بچوں میں پید اکرتی ہے اور یہی خود اعتمادی بہتر قوم کی بنیاد بنتی ہے مختلف شعبہ ہائے زندگی میں اعلی کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والی خواتین کوتقریب کے آخر میں شیلڈز ،سرٹیفکیٹ اور انعامات سے نوازا گیا *

یہ بھی پڑھیں  ورلڈ کپ سے پہلے فٹ ہوسکتا تھا لیکن ...، محمد حفیظ

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker