تازہ ترینعلاقائی

اوکاڑہ: حکومت پنجاب کی طرف سے فراہم کردہ وافر وسائل کے باوجوداوکاڑہ پولیس کی کار کردگی میں بہتری نہ آ سکی

اوکاڑہ(بیورورپورٹ)حکومت پنجاب کی طرف سے فراہم کردہ وافر وسائل کے باوجوداوکاڑہ پولیس کی کار کردگی میں بہتری نہ آ سکی ماہ مارچ کے دوران ڈکیتی اور چوری کی 104واداتیں رجسٹرڈ ہوئیں جبکہ بے شمار غیر رجسٹرڈ ہیں جس سے اوکاڑہ کے عوام کروڑوں روپے کی نقدی ،طلائی زیوارات ،موبائل فونز ،گاڑیوں ،قیمتی پارچات اور مال مویشی سے محروم ہو گئے پولیس اڑھائی ماہ قبل دوران ڈکیتی اغواء ہونے والی ایم ایس سی کی طالبہ کو ڈاکوؤں کے چنگل سے بازیاب نہ کروا سکی کرائم کے حوالہ سے اوکاڑہ سٹی سرکل بدستور پہلے نمبر پر رہا جبکہ دیپالپور اور رینالہ خورد سرکل بالترتیب دوسرے اور تیسرے نمبر پر ر ہے موٹر سائیکل چوری کی وارداتوں کے حوالہ سے سٹی سرکل کے تھانے بازی لے گئے جہاں مارچ کے مہینہ میں ایک درجن سے زائد موٹر سائیکل چوری کی وارداتوں میں شہری موٹر سائیکلوں سے محروم ہو گئے گذشتہ ماہ کے دوران کل کرائم کے915کیس رجسٹرڈ ہوئے جس میں زنا بالجبر کے13جبکہ اغواء کی29وارداتوں کی ایف آئی آر کا اندراج کیا گیا ضلع بھر میں دوران ڈکیتی مزاحمت پر ایک شہری کو ڈاکوؤں نے فائرنگ کر کے موت کے گھاٹ اتار دیا اسی ماہ تین مبینہ پولیس مقابلوں کے دوران چارر ڈاکو مارے گئے جن کے قبضہ سے برآمد ہونے والا مال مسروقہ اصل مالکان کو نہ مل سکاضلع بھر کے اٹھارہ تھانوں میں ماہ مارچ میں ضلعی پولیس نے ایمپلی فائر ایکٹ کی خلاف ورزی پر60افراد کے خلاف مقدمات درج کیے جن میں سے زیادہ مقدمات مساجد کے امام صاحبان پر درج کیے گئے علاوہ ازیں منشیات فروشوں کے قبضہ سے1734لیٹر شراب اور افیون کی بھاری مقدار پولیس قبضہ میں لی گئی لیکن پولیس تھانہ ستگھرہ کے علاقہ جبوکہ سے دوران ڈکیتی اڑھائی ماہ قبل اٹھائی جانے والی ایم ایس سی کی طالبہ امبر کو ڈاکوؤں کے چنگل سے بازیاب نہ کروا سکی جو کہ پولیس کی کارکردگی کا منہ بولتا ثبوت ہے*

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button