تازہ ترینعلاقائی

اوکاڑہ : پنجاب حکومت نیشنل ایکشن پلان کی آڑ میں سینکڑوں بے گناہوں کو گرفتار کر چکی ہے ۔ قاری عتیق الرحمن

اوکاڑہ ( بیورورپورٹ) پنجاب حکومت نیشنل ایکشن پلان کی آڑ میں سینکڑوں بے گناہ مدارس کے طلباء وعلماء گرفتار کر چکی ہے اور انہیں بلا وجہ فورتھ شیڈول میں ڈالاگیا ہے۔ صحافیوں کی آواز کو دبانا پاکستان میں آزادی اظہار رائے کیخلاف ورزی ہے۔ پنجاب میں صحافیوں کے خلاف جھوٹے مقدمات کے حوالے سے جے یو آئی قومی اسمبلی میں آواز اٹھائے گی۔ان خیالات کااظہار جمعیت علماء اسلام پنجاب کے امیر ڈاکٹر قاری عتیق الرحمن نے جامعہ مدنیہ جی ٹی روڈ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر مرکزی راہنما جے یو آئی سید احسان الحق گیلانی، سیکرٹری اطلاعات ضلع اوکاڑہ مولانا سید شمس الحق گیلانی، حافظ لطیف الرحمن، حافظ اللہ دتہ، اور سید احتشام الحق گیلانی بھی مو جود تھے۔ ڈاکٹر عتیق الرحمن نے کہا کہ پنجاب حکومت نیشنل ایکشن پلان کو ذاتی پسند و ناپسند کے لئے استعمال کر رہی ہے۔پنجاب میں آپریشن کی منظوری وزیر اعلی کی گڈ گورنس کی نا اہلی کا ثبوت ہے۔وزیر اعلی پنجاب مدارس پر چھاپے مار کر ، صحافیوں کے خلاف جھوٹے مقدمات بنا کر، بے گناہ لوگوں کو فورتھ شیڈول میں ڈال کر ،شاہ سے زیادہ شاہ کا وفادار بننے کا ثبوت دے رہے رہیں۔دہشت گردی سے پوری قوم نفسیاتی مریض بن چکی ہے ، سانحہ چارسدہ ہماری سیکیورٹی اداروں کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہے۔جے یو آئی مقتدر قوتوں سے اپیل کرتی ہے کہ قومی نیشنل ایکشن پلان کو سیاسی بھینٹ چھڑنے سے بچایا جائے اور اس کو دہشت گردی کے خلاف حقیقی معنوں استعمال کیا جائے تاکہ سانحہ پشاور، چارسدہ اور پنڈی جیسے واقعات دوبارہ رو نما نہ ہو سکیں ۔ایک سوالکے جواب میں انہوں نے کہا کہ وقت سے قبل وزارت داخلہ کی جانب سے کے پی کے حکومت کو آگاہ کرنے کے باوجود ٹس سے مس نہ ہونا کے پی کے حکومت کی نااہلی ہے جس سے یہ واقعہ رونما ہوا۔ انہو ں نے کہا کہ جمعیت علماء اسلام نے ہمیشہ پاکستان میں دہشت گردی کی بھر پور انداز میں مذمت کی ہے اور سانحہ چارسدہ میں جے یو آئی کے کارکنان نے بڑی تعداد میں ہسپتالوں میں پہنچ کر زخمیوں کو سنبھالا اور انہیں خون کے عطیات دیے*

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
error: Content is Protected!!