تازہ ترینعلاقائی

اوکاڑہ:شیرگڑھ،اوکاڑہ کے نواحی قصبہ میں عطائی ڈاکٹر کی غفلت سے خاتون نومولود بچے سمیت جاں بحق ہوگئی

اوکاڑہ(بیورورپورٹ)اوکاڑہ کے نواحی قصبہ میں عطائی ڈاکٹر کی غفلت سے خاتون نومولود بچے سمیت جاں بحق ہو گئی عطائی ڈاکٹر ہسپتال سے فرار ہو گئے تفصیلات کے مطابق اوکاڑہ کے نواحی قصبہ شیر گڑھ میں غلام رسول اورامانت علی نامی عطائی ڈاکٹروں نے لائف کیر سرجیکل کے نام سے ایک ہسپتال بنا رکھا تھا جہاں شیر گڑھ کے رہائشی افتخار عرف بگا کی 35سالہ حاملہ بیوی رانی بی بی اپنے معمول کے چیک اپ کے لیے گئی اس دوران عطائی ڈاکٹروں نے رانی بی بی کو ایک ڈرپ لگا دی ڈرپ میں ڈالے جانے والے جعلی انجکشن کے باعث خاتون رانی بی بی حالت مزید خراب ہونا شروع ہو گئی اور وہ درد سے چیخ وپکار کرنے لگی جس پر عطائی ڈاکٹرز غلام رسول اور امانت علی نے جلد بازی کرتے ہوئے گھبراہٹ کے عالم میں رانی بی بی کو آپریشن تھیٹر میں لے جانے لگے تو رانی بی بی سٹریچر سے نیچے گر گئی جس سے رانی بی بی اور اس کے پیٹ میں موجود بچہ جاں بحق ہو گئے خاتون اور بچے کی ہلاکت کے بعد عطائی ڈاکٹرز موقع سے فرار ہو گئے زچہ بچہ کی ہلاکت پر رانی بی بی کے ورثا نے ہسپتال کے باہر عطائی ڈاکٹروں کے خلاف سخت احتجاج کرتے ہوئے نعرہ بازی کی ایس ایچ او شیر گڑھ موقع پر پہنچے اور احتجاجی مظاہرین کو انصاف کی یقین دہانی کروائی پولیس کے مطابق تاحال ان کو عطائی ڈاکٹروں کے خلاف کاروائی کے لیے کوئی درخواست موصول نہیں ہوئی جیسے ہی درخواست موصول ہو گی مقدمہ درج کر لیا جائے گا یاد رہے کہ وزیر اعلیٰ پنجاب کی جانب سے عطائیت کے خاتمہ کے لیے سخت احکامات صادر کر رکھے ہیں لیکن اس کے باوجود ضلع بھر میں عطائیت کے خاتمہ لیے کریک ڈاؤن نہیں کیا جا رہا اور اوکاڑہ میں عطائیت کے ہاتھوں متعدد قیمتی جانیں ضائع ہو چکی ہیں*

یہ بھی پڑھیں  سیاسی سرگرمیاں،الزامات اور عوامی رائے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker