تازہ ترینعلاقائی

اوکاڑہ : یونیورسٹی آف اوکاڑہ کے سامنے موجود ریلوے ٹریک ایک اور جان لے گیا

اوکاڑہ (بیورورپورٹ )یونیورسٹی آف اوکاڑہ کے سامنے موجود ریلوے ٹریک ایک اور جان لے گیا، شعبہ انگریزی کی طالبہ نبیحہ مختار ٹرین کی زد میں آکر جاں بحق ہوگئی ،یہ پہلا سانحہ نہیں لیکن پھر بھی حکومت یونیورسٹی کے مسائل کو حل کرنے میں سنجیدہ کیوں نہیں؟والدین ،تفصیلات کے مطابق قاتل ریلوے ٹریک نے یونیورسٹی آف اوکاڑہ کی ایک طالبہ کی جان لے لی، شعبہ انگریزی کی طالبہ نبیحہ مختار جو کہ ایوننگ کلاس ختم ہونے کے بعد یونیورسٹی سے باہر نکلیں تو ریلوے ٹریک کراس کرتے ہوئے ٹرین کی زد میں آگئیں جس سے طالبہ کی موقع پر جان بحق ہوگئی۔نبیحہ مختار کا تعلق ضلع اوکاڑہ کے گاؤں 14 ون اے ایل سے تھا اور انہوں نے رواں سال ہی یونیورسٹی آف اوکاڑہ میں داخلہ حاصل کیا تھاموقع پر موجود ایک طالبہ کا کہنا ہے کہ نبیحہ تیزی سے ریلوے ٹریک کی جانب بڑی تو سکیورٹی گارڈ نے اسے وسل دی لیکن وہ نہ رکی اور ٹرین کی زد میں آگئی جبکہ اطلاع کے مطابق طالبہ نے ہینڈ فری لگا رکھی تھی جس کی وجہ سے آواز نہ سن سکی ۔نبیحہ کی موت کے بعد طلبا و طالبات سمیت ضلع بھر کی عوام میں غم و غصہ دیکھا جا رہا ہے، سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر ضلعی انتظامیہ اور مقامی عوامی نمائندوں کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے اور مطالبہ کیا جارہا ہے کہ ٹریک پر فوری ریلوے پھاٹک تعمیر کیا جائے تاکہ اس طرح کے واقعات سے بچا جاسکے یہ کوئی پہلا واقعہ نہیں ہے، اس سے قبل بھی شعبہ انگریزی کی ایک خاتون لیکچرر مس ماریہ یونیورسٹی کے سامنے روڈ کراس کرتے ہوئے حادثے کا شکار ہوچکی ہیں جس کی وجہ سے ان کی ایک ٹانگ فریکچر ہوگئی ایسا ہی ایک حادثہ یونیورسٹی آف اوکاڑہ کے شعبہ زوالوجی میں ایم فل کے طالب علم کے ساتھ ہوا جس سے اس کی موقع پر ہی موت واقع ہوگئی تھی ایسے بے شمار حادثات ہیں جو یونیورسٹی کے سامنے باقاعدہ راستہ نہ ہونے کی وجہ سے پیش آرہے ہیں جس کی وجہ سے یونیورسٹی انتظامیہ، طلبہ اور والدین پریشان ہیں*

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button