شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / تازہ ترین / پاکستان اسمبلی آف مسلم یوتھ اور ریاض فتیانہ

پاکستان اسمبلی آف مسلم یوتھ اور ریاض فتیانہ

محبت ،خلوص،قرابت داری اور مخلص رشتوں کا ساتھ ہونا ایک الگ نوعیت ہی کی زندگی ہے اور اگر اس میں وطن عزیز کی محبت کے حوالے سے نظریہ میں بھی یکسانیت کے ساتھ ساتھ یہ مضبوط رشتہ کئی دہائیوں پر محیط ہو ہو تو نہ صرف یہ ساتھ مادر وطن کے لئے کسی نعمت سے کم نہیں بلکہ مادیت کے اس دور میں بھائی چارے کی ایک انمول نعمت بھی ہے،ماضی میں طلباء تنظیموں میں ایک بہترین نام مسلم سٹوڈنٹس فیڈریشن کا بھی تھا اور ہے یہ تنظیمیں مسقتبل کے سیاسی میدان کی نرسریاں تھیں مگر ہمارے حکمران طبقے نے ان تنظیموں پر پابندی عائد کر دی اس وقت بھی مرکزی پارلیمنٹ کے علاوہ کشمیر،گلگت بلتستان سمیت چاروں صوبوں کی اسمبلیوں میں بڑے بڑے نامور لوگ موجود ہیں جنہوں نے اپنی سیاسی زندگی کا سفر ہی کسی نہ کسی طلباء تنظیم سے کیا تھا،پاکستان میں جب طلباء تنظیموں پر پابندی لگی تو اس کے سینئر عہدیداران و ممبران نے 1988میں پاکستان اسمبلی آف مسلم یوتھ (PAMI) بنیاد رکھی جس کے بانی چیر مین مجاہد کشمیر کے صاحبزادے سردار عتیق تھے،سردار عتیق اس وقت بھی پامی کے فعال ترین کرادروں میں سے ایک ہیں،بعد میں پاکستان اسمبلی آف مسلم یوتھ کی تنظیمی طور پر باگ دوڑ سینئر ترین ممتاز قانون دان اور سابق سیکرٹری سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن محمد السم زار نے سنبھال لی جو تاحال پامی کے چیر مین ہیں،سابق وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق بھی اس تنظیم کے سیکرٹری جنرل رہے ہیں ،گذشتہ روز پامی کے جانب سے لاہور کے ایک معروف ہوٹل میں ممبر پبلک اکاؤنٹس کمیٹی پاکستان ریاض فتیانہ ،ان کی اہلیہ آشفہ ریاض فتیانہ صوبائی وزیر ترقی خواتین کے اعزاز میں استبالیہ تقریب کا اہتمام کیا گیا ، پامی کے انتہائی متحرک سیکرٹری اطلاعات محمد آصف آصفی الخیری الراقم کو بھی ماضی کی طرح مدعو کیا،لاہور میں الصبع پہنچنے کے بعد دیرینہ دوست ذولفقار عابد سے ملاقات کی اور پھر وہ ہی مجھے پامی کی تقریب میں چھوڑنے آئے،دعوت ناموں کے باوجود پامی کی کسی بھی تقریب میں یہ میری پہلی شرکت تھی البتہ بڑے بھائی سینئر جرنلسٹ سرور انجم مغل جن کا شمار پامی کے بانی ارکان میں ہوتا ہے ضرور شامل رہتے،اس پر وقار تقریب میں ریاض فتیانہ پہنچ چکے تھے مگر ان کی بیگ محترمہ آشفہ ریاض فتیانہ حکومتی مصروفتیات کی وجہ سے نہ پہنچ سکے سابق صدر آزاد کشمیر سردار عتیق بھی بیرون ملک ہونے کی بنا پر شامل نہ ہوسکے حالانکہ کہ وہ پامی کی کسی تقریب کو مس نہیں کرتے،،اس موقع پر مقررین جن میں سابق وزیر آزاد کشمیر محمد زاہد مغل ،سید فقیر حسین بخاری،محمداقبال ڈار جنرل سیکرٹری پامی،ڈاکٹر محمد آصف مغل،چوہدری محمد نعیم کریم وائس چیر مین پامی،سید سراج احمد راشدی ایڈووکیٹ آف لاڑکانہ،مرزا سلیم بیگ آف کراچی،فقیر محمد آفریدی ،بیرسٹر حفیظ خان آفریدی ایم ایس ایف کے موجودہ مرکزی صدر ،آصف علی آصف، ملک ممتاز احمد کوئٹہ،سید غلام مجتبیٰ بخاری (احمد پور شرقیہ)سائی نظام بخش نظامانی (سانگھڑ)گل زمان خان صدر خیبر پی کے،پروفیسر آغا محمد ناصر سابق مرکزی صدر پامی،نصیب اللہ گردیزی ،ڈاکٹر نعیم کریم کوئٹہ،عبدالواحد صدیقی ڈیرہ غازی ؔ خان،امجد فاروق ایڈووکیٹ ساہیوال،خان محمدہنگورجو،جوہدری طہور الحق،مظہر امین چوہان،سید نذر محمود شاہ،سکاشف نظامانی،وسیم خان،شاہ زمان غلزئی،میر افتخار احمد،مدثر عمران ،عبدالکریم بلوچ،مہر ظہور لک،سرفراز احمد ضیاء ندیم پانیزئی،مظہر امین چوہان،وصال احمد خان،گل زمان خان ،رانا مبشر علی ،راؤ محمدحیات ،سرور انجم مغل،محمد آصف آصفی الخیری نے خطاب کیاجن کی تقاریر کا ہر ہر لفظ مادر وطن سے محبت ،اس کی سلامتی،ترقی اور خوشحالی سے لبریز تھا،سٹیج سیکرٹری کے فرائض جاوید اقبال گورائیہ نے ادا کئے،جبکہ تقریب میں ملک بھر کے ہر علاقے سے مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے پاکستان اسمبلی آف مسلم یوتھ کے عہدیداران و ممبران شامل تھے، پامی کے اجلاس اور تقاریب کا سلسلہ عرصہ دراز سے سال میں کئی کئی بار اور ملک کے ہر علاقے میں باقاعدگی سے جاری رہتا ہے،پامی اپنے ہر ممبر کے ساتھ باہمی منسلک ہاورروابط کا سلسلہ یقینی بنایا گیا ہے،یہ اپنے ہر ساتھی کو نہ صرف زندگی بلکہ دار فانی سے کوچ کر جانے کے بعد بھی یادرکھتے ہیں،گذشتہ سال اوکاڑہ کے رہائشی اور پامی کے سابق صوبائی جنرل سیکرٹری اور ایم ایس ایف کے سابق مرکزی سیکرٹری جنرل رانا محمد اکبر جوئیہ کی وفات پر اوکاڑہ میں ہی ان کے اعزا زمیں ریفرنس کا انعقاد کیا گیا جس کا انتظام سرور انجم مغل ،چوہدری عبدالستار ہانس اور محمد آصف آصفی نے کیا جس میں پامی کی مرکزی قیادت سمیت کشمیر،گلگت،خیبر پی کے،بلوچستان ،سندھ اور پنجاب کے ہر علاقے سے تعلق رکھنے والے عہدیداران نے شرکت کی،ریاض فتیانہ کے اعزاز میں منعقدہ تقریب سے اپنے خطاب میں مرکزی چیرمین محمد اسلم زار ایڈووکیٹ نے کہا کہ ہمیں فخر ہے کہ پامی کے صدرریاض خان فتیانہ اس وقت پاکستانی سیاست میں کلیدی کردار ادا کر رہے ہیں گو ہمارا نظریہ مسلم لیگ کے ساتھ ہی ہے مگر وطن کی محبت اس کی ترقی ہماری پہلی ترجیح ہے ہم ہر اس بات پر تنقید کریں گے جو وطن عزیز کے مفادات کے برعکس ہو گا محمدسلم زار نے پامی عہدیداران و ممبران کو تلقین کی کہ صرف باتوں سے بات چلانے کی بجائے عملی طور پرکچھ نہ کچھ ضرور کیا کریں، تقریب کے مہمان خصوصی ریاض فتیانہ نے اپنے مستقل دھیمے لہجے میں شرکاء کو ملکی صورتحال سے نہ صرف آگاہ کیا بلکہ اپنے کردار سے متعلق بھی بتایا کہ ہم اپنی محنت کے بل بوتے اور دوستوں کی محبت اور دعاؤں سے آج اس مقام پر ہیںیہی وجہ ہے کہ میں تین تین مرتبہ ایم این اے اور ایم پی اے منتخب،میری بیگم کو علاقے کے لوگوں نے کئی مرتبہ پذیرائی بخشی اور آج وہ صوبائی منسٹر ہیں ، بیٹے احسن ریاض پر ماموں کانجن (فیصل آباد) کے لوگوں نے اعتماد کرتے ہوئے انہیں ممبر پنجاب اسمبلی منتخب کرایا، اریاض فتیانہ نے اپنے ساتھیوں کو یقین دلایا کہ پاکستان کے قومی مفادات کے لئے وہ ماضی میں بھی ہر مقام پر ڈتے رہے اور اب بھی ان سے ایسی ہی توقع رکھی جائے وہ ان لوگوں میں سے نہیں جنہوں نے کبھی اپنے مفادات پر سمجھوتہ کیا ،کسی قسم کی وزارت و کمیٹی ممبر شپ ان کی ترجیحات میں شامل نہیں،تقریب کے اختتام پر جو سماں تھا جو انتہائی سحر زدہ تھا دور دراز سے آئے دوست آپس میں یوں گھل مل گئے جیسے صدیوں سے وہ ایک انمول ر شتے میں بندھے ہوئے ہیں،الراقم کی بھائی سرور انجم مغل کے ہمراہ آزاد کشمیر سے آئے سابق وزیر محمد زاہد مغل ،سید سراج احمد راشدی اور بیرسٹر حفیظ خان آفریدی اور سید فقیر حسین بخاری سے تفصیلی گپ شپ ہوئی ،محمد زاہد مغل نے کشمیر اور سید سراج احمدراشدی ایڈووکیٹ نے لاڑکانہ کی دعوت دی،بلاشبہ پاکستان آج ایسے ہی کرداروں کی وجہ سے قائم و دائم ہے،

یہ بھی پڑھیں  کراچی میں ٹریلر سے سات ہزار کلوگرام چرس برآمد