بین الاقوامیتازہ ترین

امریکہ کا افغانستان سے انخلاءکے بعد پاکستان میں ڈرون حملوں کیلئے نئی پالیسی پر غور

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ نے افغانستان سے انخلاءکے بعد پاکستان میں ڈرون حملوں کے لیے نئی پالیسی پر غور شروع کردیاہے تاہم اتحادی افواج کے انخلاءکے بعد ڈرون حملوں کی شدت میں کمی آجائے گی ، تیز رفتار اور طاقتورجیٹ انجن کیساتھ نیا ڈرون ”اوینجر“ چلانے پر غور کیاجارہاہے جس کی تصدیق امریکی وزیردفاع نے بھی کردی تھی ۔ امریکی اخبار کے مطابق افغانستان سے انخلاءکے بعد وسطی ایشیاءممالک بالخصوص پاکستان میں ڈرون حملوں کے لیے امریکہ نے نئی پالیسی تشکیل دینے پر غور شروع کردیاہے اور اِس مقصدکے لیے نئی ڈرون بیس بنائی جائے گی ۔ سی آئی اے کوخدشہ ہے کہ افغانستان سے انخلاءکی صورت میں پاکستان میں ڈرون آپریشن متاثر ہوگا، وسطی ایشیائی اڈے سے فوری حملہ کرنامشکل ہوگاجبکہ خفیہ معلومات اکٹھی کرنے میں بھی دشواری ہوگی ۔ رپورٹ کے مطابق ڈرون حملوں کیلئے افغان اڈے بھی استعمال ہوسکتے ہیں تاہم نیاڈرون پروگرام افغانستان کے باہر سے بھی قابل عمل ہوگا۔ اخبارمزید لکھتاہے کہ امریکہ نے ”اوینجر “نامی نیا ڈرون چلانے پر غورشروع کردیاہے ، اوینجرز تیز رفتار اور طاقتور جیٹ انجن کی صلاحیت رکھتاہے ،موجودہ ڈرون سست رفتار ہیں ،خفیہ معلومات کے حصول میں امریکی بیسز کا بنیادی کردار ہے۔ رپورٹ کے مطابق امریکی وزیردفاع نے رواں ماہ ڈرون حملوں کے نئے پروگرام پر غور کی تصدیق کی تھی ۔

یہ بھی پڑھیں  باجوڑ ایجنسی میں دھماکہ: تین ایف سی اہلکار شہید

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker