پاکستانتازہ ترین

نئے صوبے،پارلیمانی کمیشن نے حتمی سفارشات مکمل کرلیں، اکثریتی اراکین نےدستخط کردیئے

parlimentاسلام آباد(بیورو رپورٹ) نئے صوبوں کے حوالے سے قائم پارلیمانی کمیشن نے اپنی حتمی سفارشات مکمل کرلی جس پر اکثریتی اراکین نے دستخط کردیئے ہیں جلد ہی سپیکر اور صدر مملکت کو رپورٹ پیش کردی جائے گی ۔ پارلیمانی کمیشن میں ایم کیو ایم نے تحفظات کرکے مطالبہ کیا ہے کہ انتظامی ضرورت جہاں بھی ہو وہاں صوبے خوش اسلوبی سے بنائے جائیں ، کمیشن میں واحد اپوزیشن جماعت جمعیت علمائے اسلام (ف) نے مطالبہ کیا ہے کہ ڈیرہ غازی خان کو بلوچستان میں شامل کیا جائے اس حوالے سے اختلافی نوٹ جمع کرایا ہے جبکہ صوبہ ہزارہ کے معاملے پر عوامی نیشنل پارٹی اور (ق) لیگ کے درمیان تلخ جملوں کا تبادلہ ۔ پیر کے روز پارلیمنٹ ہاؤس میں نئے صوبوں کے حوالے سے پارلیمانی قائم کمیشن کا اجلاس چیئرمین فرحت اللہ بابر کی زیر صدارت منعقد ہوا اجلاس میں بہاولپور جنوبی صوبہ کی سفارشات پر غو رکیا گیا اجلاس کے چیئرمین کمیشن فرحت اللہ بابر نے کہا کہ تمام سیاسی جماعتوں نے سیاسی اور فروعی اختلافات کو بھلا کر کمیشن کے اجلاس میں شرکت کی اور سفارشات دی ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ عوام نئے صوبے کے قیام کے حوالے سے جلد خوشخبری سنیں گے ۔ کمیشن نے اپنا کام مکمل کردیا ہے نئے صوبوں کے حوالے سے مسلم لیگ (ن) کے سربراہ نواز شریف مدد کریں جبکہ کمیشن نے نئے صوبوں کے حوالے سے اپنی سفارشات مکمل کرلی ہیں جس پر اکثریتی اراکین نے دستخط کردیئے ہیں ۔ اور یہ رپورٹ جلد ہی سپیکر اور صدر مملکت آصف علی زرداری کو بھیج دی جائے گی جبکہ ایم کیو ایم کے ڈاکٹر فاروق ستار نے کمیشن سے مطالبہ کیا ملک میں جہاں بھی انتظامی طورپر صوبائی یونٹ بنانے کی ضرورت ہے وہاں بنانے چاہیے اور اس حوالے سے متعلقہ صوبائی اسمبلیاں اپنی ذمہ داریوں کو پورا کریں اور قرار داد لے آئیں جبکہ اپوزیشن کی جماعت جمعیت علماء اسلام (ِف) نے مطالبہ کیا کہ ڈیرہ غازی خان کو بلوچستان میں شامل کیا جائے کیونکہ ماضی میں بھی بلوچستان کا حصہ رہا ہے اور بہاولپور کو علیحدہ صوبہ بنایا جائے بھکر اور میانوالی کو صوبے کو علیحدہ صوبہ بنایا جائے

یہ بھی پڑھیں  ایم کیوایم چھوڑنے کی باتوں میں کوئی صداقت نہیں، رشید گوڈیل

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker