پاکستانتازہ ترین

فوجی ڈاکٹرزپنجاب پہنچناشروع،مریضوں کامعائنہ

لاہور(نامہ نگار)  پاکستانی پنجاب میں 2ہفتے سے جاری ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال کے سبب مریض شدید پریشانی کا شکار ہیں۔ صوبائی حکومت کی درخواست پر فوجی ڈاکٹرزسرکاری اسپتالوں  میں خدمات انجام دینے کے لیے پہنچنا شروع ہو گئے۔ صوبے میں 150فوجی ڈاکٹر تعینات کرنے کی تیاریاں کی جارہی ہیں۔ مختلف شہروں میں فوجی ڈاکٹر پہنچ رہے ہیں ۔ گجرانوالہ میں آرمی ڈاکٹرز نے او پی ڈی میں مریضوں کامعائنہ شروع کردیا ہے جب کہ دیگر شہروں میں پہنچنے والے ڈاکٹرزکل سے ذمہ داریاں سنبھالیں گے۔ پنجاب حکومت نے صوبے میں 454نئی لیڈی ڈاکٹر بھی بھرتی کی ہیں، پوسٹنگ پلان کے مطابق گنگا رام، سروسز، چلڈرن، جناح اسپتال اور پی آئی سی میں 26، 26، میو 28 اور جنرل اسپتال میں 25 خواتین میڈیکل افسران کا تقرر کیا گیا ہے۔ ان خواتین ڈاکٹرز کو دو جولائی تک متعلقہ ایم ایس کو رپورٹ کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔ حکومت نے نئے ڈاکٹروں سے ہڑتال نہ کرنے حلف لیا ہے اور انہیں انتباہ کیا ہے کہ اگر وہ ہڑتال کا حصہ بنے تو ان کی نوکری ختم کردی جائے گی۔ علاوہ ازیں پنجاب حکومت نے اتوار کو تمام اسپتالوں میں ڈاکٹروں سمیت تمام عملے کی چھٹیاں منسوخ کرتے ہوئے انہیں ڈیوٹی پر پہنچنے کی ہدایت کی ہے۔ اُدھر راولپنڈی میں سرکاری اسپتالوں کی او پی ڈی چھٹی کے باوجود کھلی ہیں اور مریضوں کو علاج کی سہولتیں فراہم کی جا رہی ہیں۔ حکومت نے ہڑتال پر بیٹھے مسیحاؤں کو آخری مہلت دے دی ہے اور ان پر واضح کر دیا گیا ہے کہ پیر تک ہڑتال ختم نہ کی گئی تو پھر کریک ڈاؤن کیا جائے گا۔ وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف سے لاہور میں سینئر ڈاکٹرز نے ملاقات کی اور ہڑتال ختم کرانے کے لیے24 گھنٹے کی مہلت مانگ لی ہے۔ ذرائع کے مطابق پنجاب حکومت ہڑتالی ڈاکٹروں کے لائسنس منسوخ کرکے ان کی پرائیویٹ پریکٹس پر پابندی عائد کرنے پر غور کر رہی ہے۔ محکمہ صحت کے ترجمان کے مطابق متعدد ینگ ڈاکٹرز نے کام پر آمادگی ظاہر کرتے ہوئے رابطہ کر لیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker