پاکستانتازہ ترین

کامران فیصل کااہلخانہ سے کسی بات پر تنازعہ چل رہاتھا، اصل حقائق بہت جلد قوم کے سامنے آجائیں گے،رحمن ملک

rehman malikاسلام آباد(بیورو رپورٹ)وفاقی وزیر داخلہ رحمن ملک نے کہا ہے کہ کامران فیصل کا اہلخانہ سے کسی بات پر تنازعہ چل رہا تھا، جسٹس ر جاوید اقبال نے اس کیس کی تحقیقات کرنے سے انکار نہیں کیا ہے، کامران فیصل کے بیوہ کا بیان قلمبندکرنے کیلئے کوشش کررہے ہیں۔اصل حقائق بہت جلد قوم کے سامنے آجائیں گے۔ کراچی میں ہونے والی دہشتگردی میں طالبان کا کردار بہت کم تاہم فروری میں شہر قائد میں ممکنہ دہشتگردی کی بات حساس اداروں کی رپورٹ موصول ہونے کے بعد کی تھی۔خطے سے دہشتگردی کے خاتمے کے لئے پاکستان اور بھارت ملکر کام کر رہے ہیں۔ ممبئی حملہ کیس کے حوالے سے پاکستانی عدالتی کمیشن کو بھارت جانے کی اجازت دے دی گئی ہے جسکا نوٹس آج جاری ہو جائے گا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے بدھ کے شام وزارت داخلہ میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ کراچی کی صورتحال پر کابینہ اجلاس میں ایم کیو ایم کے راہنماؤں کو بریفنگ دے دی ہے۔ کراچی میں فروری میں ممکنہ دہشتگردی کی بات انٹیلی جنس اطلاعات کے بعد کی ہے ،ملک میں دہشتگردی کی جب بھی پیشگی اطلاع ملتی ہے قوم کو اس سے آگاہ کر دیتا ہوں۔وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کہ کراچی میں ہونے والی دہشتگردی میں طالبان کا کردار بہت کم ہے، تین کالعدم تنظیموں کے لوگ شہر قائد میں تخریب کاری کررہے ہیں۔رحمن ملک کا کہنا تھا کہ کہ ممبئی حملہ کیس کے حوالے سے پاکستانی عدالتی کمیشن کو بھارت جانے کی اجازت دے دی گئی ہے جسکا نوٹس جاری ہو جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ممبئی حملوں کے بعد ڈیوڈ ہیڈلے کی بات کی تھی جو امریکی شہری ہے، دہشت گرد کہیں بھی ہو اس کے خلاف کارروائی کی جائے، دہشتگردی کے خاتمے کے لیے پاکستان اور بھارت مل کر کام کررہے ہیں۔ وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کہ شاہ رخ کے حوالے سے بطور پرستار بات کی تھی۔ان کا کہنا تھا کہ موبائل فون سموں کی جانچ پڑتال کیلئے بائیو میٹرکس سسٹم کیلئے اٹھائیس فروری کی تاریخ ہے۔کامران فیصل کا اہلخانہ سے کسی بات پر تنازعہ چل رہا تھا، جسٹس ر جاوید اقبال نے اس کیس کی تحقیقات کرنے سے انکار نہیں کیا ہے، کامران فیصل کے بیوہ کا بیان قلمبندکرنے کیلئے کوشش کررہے ہیں اور بہت جلد اصل حقائق قوم کے سامنے آ جائیں گے اب تک کی جانے والی تحقیقات میں یہی بات سامنے آ ئی ہے کہ یہ واقعہ قتل نہیں بلکہ خودکشی تھا۔

یہ بھی پڑھیں  صوبہ پنجاب میں چینی کا کاروبار کرنے والوں پر سخت پابندیاں عائد

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker