تازہ ترینعلاقائی

دنیا میں 52لاکھ افراد فضلےکوٹھکانے نہ لگانے کی وجہ سے مرجاتے ہیں

سرگودہا ﴿تحصیل رپورٹر﴾ دنیا میں سالانہ 52 لاکھ افراد او ر40 لاکھ بچے ہسپتالوں کے فضلے کو ٹھکانے نہ لگانے کی وجہ سے موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں ۔ یہی صورتحال برقرار رہی تو دنیا کی تباہی کیلئے کسی ایٹم یا ہائیڈروجن بم کی ضرورت نہیں رہے گی۔ یہ بات میڈیکل آفیسر ڈاکٹر محمد نذیر عاقب نیکوکارہ نے آج یہاں مقامی ہوٹل میں ماحولیات کے عالمی دن کے موقع پر محکمہ تحفظ ماحولیات او رمجلس تحفظ ماحولیات کے اشتراک سے منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔ سیمینار کی صدارت ای ڈی او ایجوکیشن چوہدری محمد منشا ئ نے کی جبکہ مہمان خصوصی ای ڈی او کمیونٹی ڈویلپمنٹ ناصر محمود چیمہ تھے دیگر مہمانوں میں ڈسٹرکٹ آفیسر جنگلات عمران ‘ ڈسٹرکٹ آفیسر سوشل ویلفیئر افتخار احمد چیمہ کے علاوہ میڈیا ‘ تعلیمی اداروں کے سربراہوں اور طلبا وطالبات نے بڑی تعداد میں شرکت کی ۔ڈاکٹر نذیر نیکو کارہ نے کہاکہ ہسپتالوں کے ویسٹ کی مناسب طریقے سے ڈسپوزل کے علاوہ ماحول کو صاف ستھرا رکھنا اپنے ملک کی انڈسٹری کو پولوشن فری بنانے اور کاربن ڈائی آکسائیڈ کی ماحول میں کمی سے انسانیت بہت سے مسائل اور بیماریوں سے محفوظ رہ سکتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ محکمہ صحت نے ایک قانون کے ذریعے استعمال شدہ سرنجوں کے دوبارہ استعمال پر پابندی عائد کر دی ہے جس سے بہت سی بیماریوں پر کنٹرول ممکن ہو سکے گا ۔ انہوں نے کہاکہ ماحول کو خوشگوار اور پولوشن فری بنانے کیلئے ملک میں زیادہ سے زیادہ شجرکاری کرنے کی ضرورت ہے ۔ ڈسٹرکٹ آفیسر ماحولیات محمد واجد اعجاز نے خطبہ استقبالیہ پیش کر تے ہوئے کہاکہ ماحولیات کے عالمی دن کا تقاضا او رپیغام ہے کہ ہم اپنی انڈسٹری کو پولوشن فری بنانے کیلئے ضابطوں پر سختی سے عمل درآمد کو یقینی بنائیں ۔ انہوں نے کہاکہ ماحولیات کے تحفظ کیلئے پنجاب انوائرمنٹل پروٹیکشن آرڈنینس 2012 پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے جس میں انڈسٹری کو ایسے اقدامات کرنے کا پابند بنایا گیاہے جس سے ماحول میں کثافتوں کی مقدار کو کم سے کم کیا جاسکے گا ۔ انہوں نے بیماریوں کے تدارک او رماحولیات میں بہتری لانے کیلئے ہسپتالوں کے فضلے کی ڈسپوزل کیلئے محکمہ ماحولیات کے طریقوں کو اختیار کرنے کی بھی ضرورت پر زور دیا ۔ سیمینار سے مجلس تحفظ ماحولیات کے صدر عبدالرؤف نسوآنہ او رپروفیسر نادیہ صبائ نے خطاب کرتے ہوئے ماحول کی خوبصورتی کیلئے ہر شہری کو کردار ادا کرنے کی اپیل کی ۔

یہ بھی پڑھیں  مسلم صارفین کیلئے سماجی رابطے کی متبادل ویب سائٹ ’’مسلم فیس‘‘ تیار

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker