بین الاقوامیتازہ ترین

سعودی فر ماں روا شاہ عبداللہ کا سو انح عمری

ریاض(مانیٹرنگ سیل)شاہ عبداللہ 1924 میں ریاض میں پیدا ہوئے۔ ابتدائی تعلیم شاہی محل میں ہی حاصل کی۔ کچھ سال صحرائی قبائل کے ساتھ رہے، جنہوں نے عرب کی مخصوص اقدار اور روایات سے اْنہیں روشناس کرایا۔ 1962 ء4 میں شاہ فیصل نے انہیں نیشنل گارڈ کی کمانڈ سونپی۔ 1975 ء4 میں نائب وزیراعظم دوم مقرر کیے گئے۔ 1982 ء4 میں جب ان کے سوتیلے بھائی شاہ فہد تخت نشین ہوئے تو شاہ عبداللہ کو ولی عہد نامزد کیا۔ شاہ فہد کی وفات کے بعد یکم اگست 2005 ئکو شاہ عبداللہ تخت نشین ہوئے۔ وہ سعودی عرب کے چھٹے بادشاہ ، وزرا کی کونسل کے سربراہ اور نیشنل گارڈز کے کمانڈر بھی تھے۔ شاہ عبداللہ کو مذہب ، تاریخ اور عرب ثقافت کے موضوعات سے خاص دلچسپی تھی۔ انہوں نے اپنے دور میں مملکت کی ترقی پر خصوصی توجہ دی اور تعلیم ، صحت ، انفرا اسٹرکچر اور معیشت کے شعبوں میں کئی بڑے منصوبے شروع کیے۔ شاہ عبداللہ کے نمایاں کارناموں میں مسجد الحرام اور مسجد نبوی کی توسیع کے منصوبے ،4 اقتصادی شہروں کے قیام کا منصوبہ ، شاہ عبداللہ یونی ورسٹی ، پرنسس نورا یونی ورسٹی کا قیام اور کئی بڑے فلاحی منصوبے شامل ہیں۔انہوں نے سعودی عدالتی نظام کی تاریخی تشکیل نو کی بھی منظوری دی۔شاہ عبداللہ نے عالمی سطح پر بھی قائدانہ کردار ادا کیا۔ عالمی امن و استحکام ،عرب اور اسلامی دنیا کے دفاع کے لیے بین الاقوامی سفارت کاری میں شاہ عبداللہ کی شرکت سعودی عرب کے قائدانہ کردار کی عکاسی کرتی ہے۔ شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز 91برس کی عمر میں انتقال کرگئے ،وہ کئی روز سے نمونیا کے مرض میں مبتلا ہونے کے باعث ریاض کے اسپتال میں زیر علاج تھے،

یہ بھی پڑھیں  دھرنے والوں کی گرفتاری حکومت کی انتقامی کارروائی ہوگی، یوسف رضا گیلانی

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker