پاکستانتازہ ترین

پاکستان نے شکیل آفریدی کا انٹرویو جعلی قرار دیدیا

اسلام آباد (بیوروچیف) پاکستانی حکام نے امریکی ٹی وی پر اسامہ بن لادن کے خلاف آپریشن میں مدد دینے والے ڈاکٹر شکیل آفریدی کا انٹرویو کو جعلی قرار دے دیا۔ یاد رہے کہ گزشتہ روز امریکی ٹی وی فوکس نیوز نے ایک انٹرویو نشر کرتے ہوئے دعویٰ کیا تھا کہ یہ پشاور جیل میں قید شکیل آفریدی کا ہےتاہم خیبرپختونخوا حکومت، جیل حکام اور شکیل آفریدی کے اپنے وکلاء نے بھی اس انٹرویو کو جعلی قرار دیا ہے۔ خیبرپختونخوا حکومت اور جیل حکام نے کہا ہے کہ جیل کے اندر شکیل آفریدی کا انٹرویو لیے جانے کا کوئی امکان ہی نہیں۔ پشاور جیل سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ڈاکٹر آفریدی سے ملاقات صوبائی حکومت اور جیل انتظامیہ کی اجازت کے بغیر ممکن ہی نہیں، اس لئے کسی انٹرویو کا امکان ہی پیدا نہیں ہوتا۔ خیبرپختونخواہ حکومت نے اس حوالے سے اپنے بیان میں فوکس نیوز کی خبر پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہا ہے کہ شکیل آفریدی سے صرف ان کے اہلخانہ کو ہی سے مہینے میں ایک بار ملاقات کی اجازت ہے۔ حکومت کا کہنا ہے کہ اس حوالے سے امریکی ٹی وی کی خبر مکمل طور پر فرضی اور گمراہ کن ہے۔ شکیل آفریدی کے وکیل سمیع اللہ آفریدی کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ شکیل آفریدی سے رابطے کے بعد ہم ان کی جانب سے فوکن نیوز کے انٹرویو کی تردید کرتے ہیں، یہ مکمل طور پر بے بنیاد اور پبلسٹی حاصل کرنے کا طریقہ ہے۔ سمیع اللہ آفریدی کے مطابق ان کے موکل اپنے موقف پر قائم ہیں کہ انہوں نے پاکستان میں سی آئی اے کو کسی خفیہ آپریشن میں مدد فراہم نہیں کی۔ ان کا کہنا تھا کہ شکیل آفریدی کی سیکیورٹی کی نگرانی آئی ایس آئی خود کررہی ہے اس لئے کسی کا بھی جیل کے اندر ان سے انٹرویو کرنا ممکن ہی نہیں۔ دوسری جانب آئی ایس آئی حکام نے نام چھپانے کی شرط پر کہا ہے کہ امریکی ٹی وی کا انٹرویو گھڑا ہوا اور فرضی ہے، جس کا مقصد آئی ایس آئی اور پاک امریکا تعلقات کو نقصان پہنچانا ہے۔ انہوں نے تصدیق کی ہے کہ اعلیٰ انٹیلی جنس حکام کی اجازت کے بغیر کسی شخص کو بھی شکیل آفریدی سے ملنے کی اجازت نہیں۔

یہ بھی پڑھیں  ملائشین عدالت کا ہم جنس پرستی کے الزام میں انور ابراہیم کی سزا برقرار رکھنے کا حکم

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker