پاکستانتازہ ترین

کوئٹہ کیرانی روڈ دھماکےکیخلا ف ملک بھر میں احتجاجی دھرنے، لواحقین کاتدفین سےانکار

shia-protestاسلا م آبا د ،کوئٹہ ،راولپنڈی ۔سکھر۔گلگت(بیورو رپورٹ/نامہ نگارز)کوئٹہ کیرانی روڈ دھماکے میں جاں بحق افراد کے لواحقین کا دھرنا دوسرے روز بھی جاری رہا۔ جبکہ ملک کے مختلف شہرو ں میں اس واقعہ کے خلا ف احتجا جی مظا ہرے کئے گئے، ورثاء4 نے جاں بحق افرادکی تدفین ملزمان کے خلاف فیصلہ کن کارروائی سے مشروط کی ہے۔جعفریہ الائنس نے بھی ملک بھر میں دھرنوں دینے کا اعلان کردیا۔عباس کمیلی کا کہنا ہے مطالبات نہ مانے گئے توائیر پورٹس اورہائی ویز بند کردیئے جائیں گے۔ تفصیلات کے مطا بق کوئٹہ کیرانی روڈ میں جاں بحق افراد کے ورثاء4 میتوں کے ساتھ دھرنا دے کر بیٹھے ہوئے۔ لواحقین نے جاں بحق افراد کی تدفین کو ملزمان کے خلاف فیصلہ کن کارروائی سے مشروط کرتے ہوئے ،مطالبہ کیا ہے کہ کوئٹہ کو فوج کے حوالے کے عوام کے تحفظ کو یقینی بنایا جائے۔ دہشت گردوں کے خلاف بھرپور ٹارگٹڈ آپریشن کرکے شہر میں حقیقی امن قائم کیا جائے۔ کوئٹہ کیرانی روڈ دھماکے کا مقدمہ بروری تھانے میں ایس ایچ او مدعیت میں درج کرلیا گیا ہے۔چند دن پہلے بھی کوئٹہ علمدار روڈ بھی درناک منظر سہہ چکا ہے۔ چند دنوں کے وقفے سے اتنے بڑے دو واقعات ہوجانے کے بعد کوئٹہ کے باسی شدید خوف کی کیفیت سے دوچار ہیں، دوسری طرف جعفریہ الائنس نے بھی ملک بھر میں دھرنوں کا اعلان کردیا، جعفریہ الائنس کے سربراہ علامہ عباس کمیلی نے کہا ہے دھرنے کے دوران ائیر پورٹس اور ہائی ویز بند کر دیئے جائیں گے. انھوں نے مطالبہ کیا کہ سانحہ کوئٹہ کے ملزمان فوری گرفتارکئے جائیں اور تمام زخمیوں کو ہنگامی بنیاد پر کراچی منتقل کرنے کے انتظامات کئے جائیں۔سانحہ کوئٹہ کے خلاف اور ہزارہ کمیونٹی سے اظہار یکجہتی کیلئے ملک کے مختلف شہروں میں احتجاج جاری ہے، مظاہرین کا مطالبہ ہیکہ سانحہ میں ملوث ملزمان کی فوری گرفتارکیاجائے۔سانحہ کوئٹہ کے خلاف شہر شہر احتجاج اور دھرنوں کا سلسلہ جاری ہے۔ مجلس وحدت المسلمین اور دیگر تنظیموں کے رہنماؤں کا کہنا ہے جب تک جاں بحق افراد کے لواحقین کے مطالبات منظور نہیں ہوتے دھرنوں کا سلسلہ جاری رہے گا. راولپنڈی میں فیض آباد کے علاقے میں دھرنا دیا گیا۔ جبکہ آرمی ہاؤس جانے والی سڑک پر وکلاء4 نے مظاہرہ کیا۔ مظاہرین سانحے کے ذمے داران کی گرفتاری کا مطالبہ کرہے تھے۔ لاہور میں گورنر ہاؤس کے باہرمال روڈ پر مجلس وحدت المسلمین کے کارکنوں نے دھرنادے رکھا ہے. روڈ بلاک ہونے سے ٹریفک معطل ہو کر رہ گیا، ساہیوال میں احتجاجی ریلی نکالی گئی۔ جس میں شریک مظاہرین کی حکومت کے خلاف نعرے بازی کی،،میاں چنوں میں وکلا نے شدید احتجاج، کیا اور پنجاب بار کے حکم پر عدالتوں کا مکمل بائیکاٹ کیا۔سندھ کے مختلف شہروں میں بھی دوسرے روز احتجاج کا سلسلہ جاری رہا۔ سکھر میں وحدت المسلمین کی جانب سے دھرنا دیا گیا ہے۔ مظاہرین نے رکاوٹیں لگا کر راستے بلاک کر دیئے۔خیرپور:کوئٹہ سانحہ کے خلاف شیعہ علماء4 کونسل کا شاہ حسین بائی پاس پر دھرنا۔ مٹھی ، نوشہرو فیروز، شکارپور سمیت مختلف شہروں میں بھی سانحہ کوئٹہ کے سوگ میں کاروبار بند رہا اور احتجاجی ریلیاں نکالی گئیں۔ اسکردو ، گلگت بلتستان کے مختلف علاقوں میں بھی مظاہروں اور دھرنوں کاسلسلہ جاری ہے، مظاہرین نے ٹائرجلا کر مختلف سڑکوں کو بلاک کر رکھا ہے۔ ائیرپورٹ روڈ اور اسپتال روڈ پر بھی دھرنوں کے باعث ٹریفک معطل ہے۔ ادھر پشاور ہائی کورٹ اورماتحت عدالتوں میں مکمل ہڑتال رہی۔ سبی ڈسڑکٹ بار ایسوسی ایشن کا عدالتی کاروائی کا بائیکاٹ کیا۔مجلس وحدت مسلمین کے رہنما امین شہیدی نے مطالبہ کیا ہے کہ ازخود تحفظ کیلئے اسلحہ لائسنس فراہم کئے جائے۔دھماکے کے زخمیوں کو کراچی منتقل کئیجائے۔لاہور میں نجی ٹی وی سے گفتگو سے بات کرتے ہوئے مجلس وحدت مسلیمین کے رہنما نے اپنے مطالبات پیش کرتے ہوئے کہا حکومت تحفظ فراہم کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے۔ازخود تحفظ کے لئے اسلحہ لائسنس اور کمیونٹی پولیس بنانے کی اجازت دی جائے. علامہ امین شہیدی نے کہا کہ کوئٹہ شہر کو فوج کے حوالے کرکے صوبے میں ٹارگٹڈ آپریشن کیا جائے۔کیرانی دھماکے میں شدید نوعیت کے زخمیوں کو کراچی منتقل کیا جائے. امین شہیدی نے کہا سیکیورٹی اداروں میں کچھ کالی بھیڑیں موجود ہیں جودہشت گردوں کی پشت پناہی کررہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button