پاکستانتازہ ترین

سیاچن کامعاملہ پرامن طورپرحل کرناچاہتےہیں،پاکستان

اسلام آباد﴿بیورو رپورٹ﴾پاکستان نے کہا ہے کہ سیاچن کا مسئلہ پرامن طریقے سے حل کرنا چاہتے ہیں لیکن یہاں سے فوج کی یکطرفہ واپسی کا سوچ بھی نہیں سکتے اور بھارت کے اگنی میزائل تجربے پر کوئی واضح ردعمل نہیں دیا ۔ جمعرات کے روز دفتر خارجہ کے نئے ترجمان معظم علی خان نے ہفتہ وار بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ دفاعی کمیٹی کی ہدایت پر ورک پلان ترتیب دے رہے ہیں جب تک یہ ورک پلان مکمل نہیں ہوتا  اس وقت تک امریکہ کے ساتھ مسائل اور تعلقات کے حوالے سے کوئی فیصلہ نہیں کیا جاتا جب ان سے یہ سوال کیا گیا کہ ورک پلان کی تیاری کے حوالے سے امریکہ کی طرف سے کوئی مشاورت کی گئی ہے تو اس پر ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ یہ ساری ہماری ملکی سلامتی اور  اندرونی مسئلہ ہے  اور اس میں ہمارے متعلقہ حلقے کام کررہے ہیں ورک پلان کی تیاری میں ہمیں بیرونی طرف سے کسی بھی قسم کی کوئی ہدایت قبول نہیں انہوں نے کہا کہ اسلام آباد امریکی سفارتخانے کی توسیعی معاملے پر صورتحال کا جائزہ لے رہے ہیں  جبکہ نیٹو سپلائی پر حتمی فیصلہ نہیں ہوا ۔ ایک سوال کے جواب میں ترجمان نے کہا کہ خافظ سعید کے حوالے سے ہمارا موقف بالکل واضح  ہے انہوں نے کہا کہ  بھارت نے اگنی 5 میزائل کے تجربے کے حوالے سے  پاکستان کو پیشگی اطلاع دی تھی ۔ بھارت کو دی گئی  تجاویز میں سیاچن سے یکطرفہ  فوجیوں کی واپسی کی تجویز نہیں ہے ، دفاع سیکرٹری مذاکرات آئندہ ماہ میں ہوں گے اور دونوں ممالک اگلے مذاکرات کی تیاری کررہے ہیں اور ان مذاکرات کی قیادت دونوں ممالک کے سیکرٹری  دفاع کرینگے سیاچن معاملے کو پرامن طریقہ سے حل کرنا چاہتے ہیں ۔

یہ بھی پڑھیں  اسلام بت فروشی نہیں بت شکنی کاعلمبردار ہے: محمدناصراقبال خان

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker