تازہ ترینعلاقائی

سنجھورو:کاشتکاروں کوٹریکٹراسکیم کا جھانسہ دے کراربوں روپے ہڑپ کر لئے،کاشتکاردربدر

سنجھورو ﴿نامہ نگار﴾حکومت سندھ نے کاشتکاروں کو ٹریکٹر اسکیم کا جھانسہ دے کر اربوں روپے ہڑپ کر لئے،کاشتکار در بدر۔ تفصیلات کے مطابق حکومت سندھ نے امسال سندھ کے کاشتکاروں کے لئے ٹریکٹر اسکیم شروع کی تھی جس کے تحت قرعہ اندازی کے زریعے کاشتکاروں کو 8لاکھ کے ٹریکٹر پر 3 لاکھ کی سبسڈی اور 8لاکھ سے کم مالیت کے ٹریکٹر پر 2لاکھ کی سبسڈی کا اعلان کیا تھا۔اس سلسلے میں ڈائریکٹوریٹ آف واٹر مینجمنٹ اینڈ ایگریکلچر انجینئرنگ نے مارچ میںلاکھوں کی تعداد میں حبیب بینک لمیٹڈ کے زریعے فارم کاشتکاروں میں تقسیم کئے تھے۔ مزکورہ فارم کے ساتھ سندھ بھر میں لاکھوں کاشتکاروں نے مبلغ پچیس ہزار 25000/= روپے کا پے آرڈر بھی جمع کرائے تھے۔اس اسکیم کے تحت پہلی قرعہ اندازی راوں سال اپریل میں کی گئی جس کے تحت قرعہ اندازی میں نام آنے والے کاشتکاروں کا اعلان کیا تھا۔ اور جن کے نام اس میں شامل نہیں تھے ان کو فوری طور پر پچیس ہزار﴿25000﴾ روپے واپس کئے جانے تھے لیکن جب کاشتکاروں نے یہ قابلِ واپسی رقم حکومت سے طلب کی تو حکومت سندھ کی جانب سے اعلان کیا گیا کہ ابھی یہ رقم واپس نہیں دی جائے گی بلکہ دوسری قرعہ اندازی کی جائے گی جس کے بعد یہ Refundableرقم کاشتکاروں کو واپس کی جائے گی۔لیکن اس قرعہ اندازی کو ہوئے بھی 2ماہ ہونے کو ہیں اور یہ رقم ابھی تک واپس نہیں کی جارہی۔جبکہ ہیڈ آفیس شہباز بلڈنگ حیدرآباد رابطہ کرنے پر کاشتکاروں کو ہر روز ایک نئی تاریخ دے دی جاتی ہے۔حکومت سندھ کے اس غیر زمہ دارانہ اور ناروا سلوک کی وجہ سے سندھ بھر کے کاشتکاروں میں شدید بے چینی پائی جاتی ہے۔بلخصوص سندھ کے اضلاع سانگھڑ، بدین، میر پور خاص، عمر کوٹ اور دیگر اضلاع جہاں گزشتہ سال سیلاب نے تباہی مچا دی تھی جس کی وجہ سے کاشتکار پہلے یہ بد حالی کا شکار ہیں مزید بد حال ہو رہے ہیں۔ حکومت سندھ کو چاہئے کہ کاشتکاروں کی فلاح و بہود کے لئے ضروری اقدامات کرے اور ان کاشتکاروں کو ان کے قابلِ واپسی رقم فوری واپس کرے۔

یہ بھی پڑھیں  واپڈا کی غفلت سے لیسکو بھائی پھیرو کا ملازم کرنٹ لگنے سے ہلاک

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker