آر ایس مصطفیٰتازہ ترینکالم

سپہ سالار امن۔۔۔۔۔۔حضرت محمدﷺ

rs mustafaٹھیک وقت تو یاد نہیں مگر یہ ان دنوں کی بات ہے جب میں نے پاکستان کی سب سے بڑی کالم نگاروں کی تنظیم پاکستان فیڈرل یونین آف کالمسٹ جوائن کی اور پھر یونین کی مٹینگزمیں جانا ایک معمول سا بن گیا اور انہی میٹنگ میں میری ملاقات ایک ایسے نوجوان قلمکار سے ہوئی کہ جن کی میں نے صرف تحریریں پڑھی تھی کبھی ملاقات کا شرف حاصل نہ ہوا تھا مگر جب ان نوجوان قلمکار سے ملنا ہوا تو ایسا محسوس ہوا میں انھیں ایک عرصے سے جانتا ہوں پھر ملاقاتوں کا سلسلہ ایسا چلا کہ چلتے چلتے دوستی اور بھائیوں والا رشتہ بن گیا ۔ا ن کی تحریریں اسلام سے انکی محبت اور ملکی حالات سے انکی واقفیت کا پتہ دیتی ہے میرے یہ دوست میرے یہ بھائی نسیم الحق زاہدی جنھوں نے سپہ سالار امن جیسی خوبصورت کتاب لکھ کر حضور ﷺ کی ذات اقدس سے اپنی بیشمار محبت و عقیدت کا ثبوت دیا۔جس موقع پر یہ کتاب شائع ہوئی اس سے مصنف کی وقت شناشائی کی خوبی صاف ظاہر ہے یہ مہینہ ربیع اول سپاسالار امن ﷺکی پیدائش کا مہینہ ہے۔سپاسالار امن حضرت محمد ﷺپوری انسانیت کے محسن ہیں اور آپ ﷺکے احسانات کا شمار کسی مختصر کالم میں تو کیاہزاروں صفحات پر مشتمل کسی کتاب میں بھی نہیں کیا جا سکتامگر میرے دوست میرے بھائی نے سپاسالار امن شائع کرکے حضور اقدس ﷺ سے اپنی محبت اپنی عقیدت کا اظہار کیا ہے
فتح مکہ کا دن ہے ،آج وہ سارے مجرمین آپ کے سامنے سرنگوں ہیں جنہوں نے آپ کو ،آپ کے اہل خانہ کو ، اصحاب کرام کو اورکمزور مسلمانوں پر ظلم و ستم ڈھائے تھے ،وہ ابو سفیان بھی ہے جس نے غزوہ بدر، غزوہ احد، غزوہ خندق کی لڑائیوں میں کفارکی قیادت کی،اور آپ ﷺ کو ہر بار تہہ تیغ کرنے کی ناکام کوشش کی تھی ،آپ چاہتے تو ایک ایک مجرم سے ان کے گناہوں کا بدلہ لے سکتے تھے ، ،اگرآپ خواہش کرتے توخون کی ندیاں بہا دیتے ،کھوپڑیوں کے انبار لگا دیتے ،مگر قربان جاؤں میں اپنے آقا ﷺ پر آپﷺ نے فرمایا : اے مکہ والوں جاؤ ! آج تم سب آزاد ہو ،آج کسی سے بدلہ نہیں لیا جائے گا ، آپ ﷺنے فرمایا کہ جو ابو سفیان کے گھر میں پناہ لے گا آاس کو امان ملے گاجو ہتھیارڈالے گااس کو بھی امن اور جو دروازہ بند کر لے گا وہ بھی امان میں ہے۔ ایک اور جگہ آتا ہے کہ ایک بار حضور اقدس ﷺ طائف کی طرف تبلیغ کی غرض سے تشریف لے گئے تو کفار نے پاگل کہہ کر آپ کے اوپر ا پتھر بر سائے کہ آپ ﷺ کے نعلین مبارک تک خون سے بھر گئے اتنے میں فرشتہ حا ضر ہوا اور عرض کیا :یا رسول اللہ ! اگر حکم کریں تو ان دونوں پہاڑوں کو ملادوں اور ان بد بختوں کو صفحہ ہستی سے مٹا دوں ، آپ ﷺ کے جواب پرمیں قربان حضور اقدس ﷺنے فرمایا : مجھے امید ہے ان کی آئندہ نسلوں میں ایسے افراد پیدا ہوں گے جو خالص اللہ کی عبادت کریں گے ،اور اس کے ساتھ کسی کو شریک نہیں ٹھہرائیں گے۔(بخاری و مسلم )۔آپﷺ پر ظلم و جبر کے پہاڑ توڑے گئے آپ ﷺکے چچا آپﷺ کی صاحبزادی کو قتل کیا گیا مگر قربان جاؤں میں اپنے آقاﷺ کی شان پر کہ جب آپﷺ کے چچا کا قاتل دائرہ اسلام میں داخل ہوا تو آپﷺ نے اسے بھی معاف کردیا۔آپﷺ نے امن ،محبت اور بھائی چارے کا درس دیا،۔آج دنیا میں دہشتگردی اپنے عروج پر ہے ،اسلامی تاریخ بتاتی ہے کہ غیر مسلموں کے ساتھ مکالمہ اور بات چیت کی نہ صرف یہ کہ اسلام کی طرف سے اسکی اجازت ہے بلکہ پیغمبر اسلام ﷺ کی سنت بھی ہے۔مکالمے سے بڑھ کر معاہدہ بھی اہم ہے ،صلح حدیبیہ اور میثاق مدینہ اسلامی تاریخ کے مشہور و معروف معاہدے ہیں ۔اسلام کی بنیاد ہی عدل وانصاف اور امن و امان پر رکھی گئی ہے آج ضرورت اس امر کی ہے کہ دنیا کو امن کا گہوارہ بنایا جائے جو کہ آقا ﷺ کی تعلیمات اور سنتوں کی پیروی کر کے ہی بنایا جا سکتا ہے ۔دعا ہے کہ اللہ پاک ہمیں نبی پاکﷺ کی تعلیمات پر چلنے کی توفیق دے اور ملک کو امن کا گہوارا بنائے آمین۔

یہ بھی پڑھیں  آئندہ الیکشن میں اسلام اورپاکستان سے مخلص جماعتیں گرینڈالائنس بنارہی ہیں،ابوالخیرزبیر

note

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker