تازہ ترینفن فنکار

کوئی مجھے پسند کرے یا نہ کرے، انٹرنیٹ پر تلاش سب کرتے ہیں: سنی لیون

سنی لیون کا نام سنتے ہی ان کے مداحوں کے دل زور زور سے دھڑکنا شروع کردیتے ہیں جس کی وجہ یہی ہے کہ ان کا فن انہیں دیگر تمام بالی ووڈ ہیروئنوں سے ممتاز کرتا ہے۔
انتہائی ”قابل “فنکارہ کے متعلق ان کی ماضی کی فنکاری کی وجہ سے متعدد شکوک و شبہات بھی پائے جاتے ہیں اور طرح طرح کی باتیں بھی کی جاتی ہیں جن کا جواب انہوں نے ایک حالیہ کالم میں تفصیل سے دیا ہے۔ وہ کہتی ہیں کہ بالی ووڈ میں کام کرنا ان کا خواب تھا اور اس کی تکمیل کا سفر اس وقت شروع ہوا جب انہیں ”بگ باس“ پروگرام میں شرکت کی دعوت دی گئی۔ بالی ووڈ میں آنے کے بعد وہ خود تو بہت خوش تھیں لیکن لوگوں نے انہیں قبول نہ کیا اور ان کے ماضی کو بنیاد بنا کر طرح طرح کی ناگوار باتیں جاری رکھیں۔ اپنی صفائی پیش کرتے ہوئے وہ لکھتی ہیں کہ لوگ یہ بات نہیں سمجھتے کہ وہ جو کام کرتی رہی ہیں وہ ایک ملازمت کی طرح تھا۔ آپ کوئی بھی ملازمت کریں تو اس کے تقاضے پورے کرنے پڑتے ہیں اور وہ یہی کام اپنی ملازمت کے دوران کرتی رہیں۔ وہ کہتی ہیں کہ اب ان کا ماضی بہت پیچھے رہ گیا ہے اور اب نظر صرف مستقبل پر ہے اور لوگوں کو بھی یہ بات سمجھنی چاہیے کہ وہ اداکاری کی دنیا میں نمایاں مقام کے حصول کیلئے کوشاں ہیں اور انہیں مداحوں کے دعاﺅں اور تعاون کی ضرورت ہے۔ اپنی ہنس مکھ اور ملنسار طبیعت کے متعلق وہ کہتی ہیں کہ انہیں کسی بھی شخص کو بدلنے کیلئے کیلئے صرف پانچ منٹ کا وقت درکار ہوتا ہے لیکن وہ تمام دنیا کی سوچ نہیں بدل سکتیں، ہاں البتہ اگر انہیں ہر شخص پر پانچ منٹ لگانے کا موقع میسر آسکے تو وہ ایک ایک کر کے سب کو بدل سکتی ہیں۔ وہ کہتی ہیں کہ وہ طبعاً بولڈ ہیں اور اگرچہ کچھ لوگ ان کی مخالفت کرتے ہیں لیکن وہ کچھ بولڈ کئے بغیر رہ نہیں سکتیں اور مداحوں کے جذبات میں ہلچل مچانے سے ہی انہیں خوشی حاصل ہوتی ہے وہ اعتراض کرنے والوں سے کہتی ہیں کہ لوگ چھپ چھپا کر کیا نہیں کرتے جبکہ انہوں نے تو ماضی میں جو بھی کیا محض کام سمجھ کر کیا اور کسی سے چھپایا بھی نہیں۔
آخر میں وہ کہتی ہیں کہ کوئی ان سے پیار کرتا ہے تو کوئی ان پر اعتراض کرتا ہے، لیکن انہیں اس سے فرق نہیں پڑتا کیونکہ انٹرنیٹ پر ان کی تلاش سب ہی کرتے ہیں، چاہے وہ چاہنے والے ہوں یا نہ چاہنے والے۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
error: Content is Protected!!