پاکستانتازہ ترین

سپریم کورٹ کےہرفیصلے پرعمل درآمد کراکے دم لیں گے، ڈاکٹر طاہرالقادری

tahir ul qadriاسلام آباد(بیورو رپورٹ)تحریک منہاج القرآن کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا ہے کہ لانگ مارچ انقلابی ہے اورو ہ اس وقت تک بیٹھے رہیں گے جب تک ملک سے ظلم ،ناانصافی،بدامنی،لاقانونیت،کرپشن اور جبر سمیت تمام بحرانوں سے عوام کو نجات نہیں مل جاتی۔اسمبلیوں کی تحلیل کا مطالبہ پر قائم ہیں مگر لانگ مارچ کے پر امن کارکنان کوئی غیر جمہوری اقدام نہیں اٹھائیں گے۔طاقت کے ایوانوں میں بیٹھے حکمرانوں کو گریبانوں سے پکڑ کر عوام کی عدالت کے تابع کر کے دم لیں گے۔پاکستانی فوج ہی ملک کی سرحدوں اور پاکستان کی نظریاتی اساس ہے اور فوج کا کام اپنی عوام کی حفاظت کرنا ہے،دن کی روشنی میں کیچڑ اچھالنے والوں کورات کی تاریکی میں عسکری قیادت سے ملاقاتیں کرتے ہوئے شرم کیوں نہیں آتی۔صدر زرداری ،نواز شریف ،اسفند یار ولی اور ایم ایم اے کے لوگوں سے کوئی دشمنی نہیں بلکہ صرف جمہوریت کی بات کی ہے۔دہشت گردی و انتہا ء پسندی کے خلاف صحیح معنوں میں جنگ کی ضرورت ہے۔سپریم کورٹ کے ہر فیصلے پر عمل درآمد کرا کے دم لیں گے۔بھٹو کے روٹی،کپڑا اور مکان کے نعرے کو زرداری اور پیپلز پارٹی نے جھٹلایا ہے اور منہاج القرآن نے اس پر عمل کیا ہے۔یہ کربلا کا معرکہ ہے اگر سب لوگ بھی ساتھ چھوڑ جائیں تو عوام کو جیت دلائے بغیر واپس نہیں جاؤں گا۔ان خیالات کا اظہار منگل کے روز پارلیمنٹ ہاؤس کے بالکل سامنے واقع ڈی چوک میں لانگ مارچ کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔طاہر القادری نے کہا کہ لانگ مارچ ایک انقلابی تحریک ہے مگر ہم بد امنی پھیلانے والے لوگ نہیں۔انہوں نے کہا کہ لانگ مارچ کے ایجنڈے میں شامل ہے کہ اسمبلیوں کو تحلیل کیا ہے جائے اور اس کے لئے حکومت کو وقت بھی دیا۔یہ عوام حقیقی جمہوریت کے نفاذ کے لئے میدان عمل میں کود پڑے ہیں ۔ہم ایوان صدر اور پارلیمنٹ پر قبضہ کرنے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتے اور ہم تبدیلی چاہتے ہیں۔سفر انقلاب کے شرکاء کے پالیمنٹ ہاؤس کے سامنے ہونے سے حکمران شدید خطرہ محسوس کر رہے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ فوج ہی پاکستانی فوج ہے ملک کی نظریاتی اساس کی محافظ ہے ،دن کی روشنی میں فوج پر کیچڑ اچھالنے والے سیاستدانوں کورات کی تاریکی میں عسکری قیادت سے ملاقاتیں کرنے سے شرم کیوں نہیں آتی۔اسی تبدیلی چاہتے ہیں جس سے ملک میں حقیقی جمہوریت کا نفاذ ہو ملکی معیشت مضوط ہو ترقی کا دوردرہ شروع ہو۔ان کا کہنا تھا کہ ہم اصلاحات کے ذریعے دہشت گردی اور انتہا پسندی سے نمٹنا چاہتے ہیں ،حکومت پانچ سال کے دوران دہشت گردی سے نمٹنے کی پالیسی نہیں بنا سکی۔دہشتگردی و انتہاء پسندی سے نمٹنے کے لئے صحیح معنوں میں جنگ کی ضرورت ہے تاکہ ملک کو اس لعنت سے پاک کیا جا سکے۔ملک میں عوام کے کی خوراک کے لئے عذائی اجناس کی قلت،قتل و غارت اور ٹارگٹ کلنگ کا راج ہے۔آج ملک میں قانون نہیں ،پینے کے لئے صاف پانی نہیں غرض عوام کو ہر قسم کے مسائل ہیں تو دوسری جانب عوامی مفاد کے عدالتی فیصلوں پر حکومت عمل درآمد نہیں کر رہی۔موجودہ پارلیمنٹ کی ترجیحات میں لوٹ مار اور کرپشن شامل ہے۔انہوں نے پیپلز پارٹی کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ بھٹو نے روٹی ،کپڑا اور مکان کا نعرہ لگایا تھا جسے زردار ی نے پس پشت ڈال دیا مگر طاہر القادری نے اس سے بڑھ کر عوام کی خدمت کو اپنا شعار بنا لیا ہے اور بھٹو کے نعرے کوعملی جامعہ بھی پہنا رہی ہے۔طاہر القادری نے اپنے خطاب میں ذرائع ابلاغ کے ذریعے ان کا خطاب سننے والوں سے بھی اپیل کی ہے کہ وہ لانگ مارچ میں شرکت کے لئے گھروں سے نکال آئیں کیونکہ وہ اپنے ذاتی مفاد نہیں عوام کی جنگ لڑ رہے ہیں اور یہ جنگ اس وقت تک جاری رہے گی جب تک عوام کوجیت نصیب نہیں ہو جاتی ۔طاہر القادری نے مزید کہا کہ وہ یہاں پاکستان کے بیٹے بیٹوں کے مستقبل کا مشن لیکر آئے اور اگر ناکام لوٹتے ہیں تو وہ زندہ رہنے سے قبر میں جانے (موت)کو ترجیح دینا پسند کریں گے۔تحریک منہاج القرآن کے سربراہ نے مارچ کے شرکاء سے قرآن پاک پر حلف لیتے ہوئے کہا کہ وہ اس تحریک کو جاری رکھنے کے لئے اس وقت تک ان کا ساتھ دیں گے جبکہ تک حقیقی جمہوریت کا نفاذ،ظلم،جبر ،نا انصافی،بربریت،لاقانونیت ،دہشتگردی ،کرپشن اور لوٹ مارکا خاتمہ نہیں ہو جاتا اور عوام کو اصل حقوق مل نہیں جاتے۔

یہ بھی پڑھیں  ڈاکٹرطاہرالقادری نےاکتوبر1999ء میں آئی ایس آئی کےمعزول ڈائریکٹرجنرل کی ایما پرمشرف اورضیاءالدین بھائی بھائی کانعرہ لگایا

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker