تازہ ترینعلاقائی

تلہ گنگ، واپڈا کارکردگی پر سوالیہ نشان

talagangتلہ گنگ (مانیٹرنگ سیل)پچنند اور اس کے گردونواح میں جب بھی ہلکی بارش ہو یا موسم ابرآلود ہو تو شہریوں کو شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑ جاتا ہے ۔ بارش کے ہوتے ہی پچنند سمیت دیگر علاقوں کی بجلی غائب ہوجانا معمول بن گیاجس کی وجہ سے عوامی و سماجی حلقوں نے میڈیاسے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ بیشتر بار موسم خراب ہونے یا بارش ہونے کی صورت میں کوٹگلہ فیڈر ٹرپ کرجاتا ہے یا مین لائن پر کسی قسم کا فالٹ آجاتا ہے، عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ ہربار ایسا ہونا اور وہ بھی صرف کوٹگلہ فیڈر کے ساتھ انتہائی تشویش کا باعث ہے۔ ہلکی بارش ہونے سے متعدد بار لائن پر فالٹ آجانے سے عوام نے اپنے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یا تو عملہ انتہائی سستی کا مظاہرہ کرتا ہے کہ اگر ہر بار لائن نے ٹرپ ہونا ہے تو اعلیٰ حکام اس اہم ترین مسئلے کے حل کی طرف سنجیدگی سے کیوں اقدامات نہیں کرتے؟ باربار ایسا ہونے سے سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا واقعی ہی لائن میں فالٹ آسکتا ہے اگر آتا ہے تو اسے عملہ کی کمی کی وجہ سے بروقت درست نہیں کیا جاتا یا اس پر عملہ کی طرف سے روائتی سستی برتی جاتی ہے؟ عوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ واپڈا حکام کی طرف سے کوٹگلہ فیڈر کے لیئے نئی لائن بچھائی گئی اس کے باوجود نہ تو وولٹیج میں بہتری آئی اور نہ ہی لائن ٹرپ ہونا ختم ہوسکی۔ منگل کے روز ہلکی بارش سے 4گھنٹے سے زائد کوٹگلہ فیڈر بند رہا جس کی وجہ سے عوام کو رمضان المبارک میں شدید پریشانی سے دوچار ہونا پڑا۔ پچنند اور اس سے ملحقہ دیگر علاقوں میں بارش کے بعد بجلی کا بند رہنا واپڈا حکام کی کارکردگی پر بہت بڑا سوالیہ نشان ہے۔ اہلیان علاقہ کا واپڈا کے اعلیٰ حکام سے پرزور مطالبہ ہے کہ مین لائن پرکمزور تاروں کو ہٹا کرپختہ کام کیا جائے تاکہ بارش کے بعد بجلی کی بحالی کو یقینی بنایا جائے۔

یہ بھی پڑھیں  گوجرانوالہ:ہمارے ملک کونہ جانےکیوں دو بڑی جماعتوں نےچونےلگائےہیں، شوکت منیر

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker