تازہ ترینعلاقائی

کرموال قتل کیس،ایڈیشنل سیشن جج ٹیکسلا نے ایس ایچ او کو ملزمان کیخلاف قتل کا مقدمہ کے اندراج کا حکم دے دیا

ٹیکسلا( ڈاکٹر سید صابر علی/نامہ نگار)کرموال قتل کیس ، بائیس اے کی درخواست پر ایڈیشنل سیشن جج ٹیکسلا نے ایس ایچ او ٹیکسلا کو ملزمان کے خلاف قتل کا مقدمہ کے اندراج کا حکم دے دیا ،تفصیلات کے مطابق کرموال کے رہائشی اختر ولد کالا خان نے اپنے وکیل سید اکرار حیدر کے توسط سے ایڈیشنل سیشن جج ٹیکسلا ظفراللہ نیازی کی عدالت میں بائیس اے کے تحت درخواست دی تھی جس میں مدعی کا موقف تھا کہ اسکا بھائی صفدر جلا نہیں بلکہ اسے قتل کیا گیا تھا جو کہ فرانزک رپورٹ آنے کے بعد حقیقت عیاں ہوگئی ، گزشتہ روز کیس کی سماعت کے دوران مدعی کے وکیل سید اکرار حیدر نے اپنے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ پولیس نے اسے اتفاقیہ حادثہ قرار دیکر کیس کو دبانے کی کوشش کی جبکہ صفدر ولد کالا خان جسے گھر کے قریب جھگی میں ایک سازش کے تحت لیکر جایا گیا جبکہ کلہاڑیوں کے وار کر کے پہلے اسے قتل اور بعد ازاں جھگی جلا کر نعش کو جلادیا گیا جس کی بنیادی وجہ شہادت کو ختم کرنا تھا ، پولیس نے ملزمان کے ساتھ ملی بھگت کرتے ہوئے انصاف کے تقاضوں کو پورا نہ کیا لہذا اب جبکہ فرانزک میڈیکل رپورٹ میں ا س ابات کی تصدیق ہو چکی کہ معمر صفدر ولد کالا خان کے جھلس جانے سے موت واقع نہیں ہوئی بلکہ اسے ایک مصممم ارداے کے تحت باہم صلاح مشورہ ہوکر بوڑھے شخص کو قتل کیا گیا،عدالت نے وکیل سید اکرار حیدر کے دلائل سے اتفاق کرتے ہوئے ایس ایچ او ٹیکسلا کو فوری واقعہ میں ملوث افراد کے خلاف قتل کامقدمہ درج کرنے کا حکم دے دیا،ادہر احاطہ عدالت میں متوفی صفدر کی بھتیجی دلشاد بیگم کا کہنا تھا کہ چوکی انچارج کینٹ سب انسپکٹر عمران عباس جسے جرات اور بہادری کا تمغہ دیتے ہوئے ایس ایچ او صدر واہ کینٹ تعینات کیا گیا تمام ڈرامہ رچا کر با اثر افراد سے لاکھوں روپے رشوت حاصل کی اور ہمیں کیس کی پیروی نہ کرنے پر ڈڑاتا دھمکاتا رہا ، انصاف کو گلا گھوٹننے والے افسر کے خلاف سخت محکمانہ کاروائی ہونی چاہئے انھوں نے وفاقی وزیر چوہدری نثا رعلی خان ، وزیر اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف ، چیف جسٹس آف پاکستان وزیر اعظم نوا زشریف سے اپیل کی کہ پنجاب پولیس میں ایسے گھناونے کردار کے مالک رشوت خور پولیس افسر کو نشانہ بنایا جائے تاکہ محکمہ سے کالی بھیڑوں کا سدباب ممکن ہو ،بائیس اے کی درخواست پر عدالتی فیصلہ کے بعد نئے تعینات ہونے والے ایس ایچ او تھانہ صدر واہ کینٹ عمران عباس کی تعیناتی بھی خطرے میں پڑ گئی،یاد رہے کہ ایس ایچ او ٹیکسلا ملک ساجد کو بھی چوہدری نثار علی خان کی آمد پر معطل کیا گیا مگر سیاسی اثر رسوخ اور مضبوط آشیر باد رکھنے والا ایس ایچ او پھر بچ نکلا ،اب قتل کے کیس میں عدالتی حکم پر ایس ایچ او عملدرآمد کرتا ہے یا اپنے پیٹی بھائی کو بچانے کے لئے ہاتھ پاوں مارتا ہے یہ وقت بتائے گا ،تاہم کرموال کیس نے مقامی پولیس کی اچھی کارکردگی کا پول کھول دیا ، مدعیان کے مطابق وہ عنقریب پولیسکے کالے کرتوتوں اور پس پشت سرپرستی کرنے والے عناصر کے چہروں سے پردہ اٹھائیں گے ۔

یہ بھی پڑھیں  ڈسکہ:پیغام ویلفئیرفاؤنڈیشن کی جانب سے مستحق خاندانوں میں رمضان پیکج تقسیم

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker