آصف یٰسین لانگوتازہ ترینکالم

علماء کرام ایک پلیٹ فارم پر کیوں متحد نہیں ؟

asif yasinحضرت عمر فاروق رضہ اللہ تعالیٰ عنہ مسلمانوں کے دوسرے خلیفہ تھے ۔ ان کے دور میں اسلامی مملکت28لاکھ مربع میل تک پھیل گئی۔ایک مرتبہ آپ مسجد کے منبر رسول ﷺ پر کھڑے خطبہ دے رہے تھے کہ ایک غریب شخص کھڑا ہوگیااور کہا کہ اے عمر ہم تیرا خطبہ ا سو قت تک نہیں سنیں گے ۔جب تک یہ نہیں بتاؤ گے کہ یہ جو تم نے کپڑا پہنا ہوا ہے۔وہ زیادہ ہے جبکہ بیت المال سے جو کپڑا ملا تھاوہ اس سے بہت کم تھا۔تو حضرت عمر فاروق رضہ اللہ تعالیٰ عنہ نے کہا کہ مجمع میں میرا بیٹا عبداللہ بھی موجود ہے۔عبداللہ بن حضرت عمر فاروق رضہ اللہ تعالیٰ عنہ کھڑے ہوگئے۔حضرت عمر فاروق رضہ اللہ تعالیٰ عنہ نے کہا بیٹا بتاؤ تمھارا باپ یہ کپڑا کہاں سے لایا ہے ورنہ قسم اس ذ ات کی جس کے قبضہ قدرت میں میری جان ہے میں قیامت تک اس منبرپر نہیں چڑھوں گا۔حضرت عبداللہ بن حضرت عمر فاروق رضہ اللہ تعالیٰ عنہ نے بتایا کہ بابا کو جو کپڑا ملا تھا وہ بہت کم تھااس سے ان کا پورا کپڑا نہیں بن سکتا تھا، اور ان کے پاس پہننے کا لباس خستہ حال ہو چکا تھا اس لیے میں نے اپنا کپڑا اپنے والد صاحب کو دے دیا۔
حضرت عمرفاروقؓ کی بیوی (عاتکہ)کہتی تھی کہ؛عمر فاروق ؓ بستر پر سونے کے لیے لیٹتے تو نیند ہی اڑ جاتی تھی،بیٹھ کررونا شرو ع کر دیتے تھے۔ تو میں پوچھتی تھی کہ ؛ اے امیر المومنین ،کیا ہوا؟وہ کہتے تھے: ”حضرت محمد ﷺ کی امت کی خلافت ملی ہوئی ہے،اس میں مسکین بھی ہیں ضعیف بھی ہیںیتیم بھی ہیں اور مظلوم بھی ، مجھے ڈر لگتا ہے اللہ تعالیٰ مجھ سے ان سب کے بارے میں سوال کریں گے۔مجھ سے جو کوتاہی ہوئی تو میں اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول ﷺ کو کیا جواب دو ں گا۔” سیدنا عمر کہتے تھے : اللہ کی قسم، اگردجلہ کے دو ر درازعلاقے میں بھی کسی خچر کو راہ چلتے ٹھوکر لگ گئی تو مجھے ڈر لگتا ہے کہیں اللہ تعالی ٰ مجھ سے یہ سوال نہ کردیں اے عمر، تونے وہ راستہ ٹھیک کیوں نہیں کرایا تھا؟
حضرت عمرفاروقؓ کی انداز حکمرانی دیکھ کر ایک غیر مسلم یہ کہنے پر مجبور ہو ا کہ” اگر حضرت عمرفاروقؓ 10 سال اور ملتے تو دنیا سے کفر کا نام و نشان نہیں ملتا” اان کے انصاف اور عدل کے نظام نے ہزاروں لوگوں کو متاثر کیا اور اسلام قبو ل کرتے گئے۔
حکمران عوام کی تمام ضروریات ،تحفظ، انصاف ، مساوات ، تعلیم، صحت اور تمام سہولیات کا زمہ دار ہوتا ہے ۔
ہم حضرت عمر فاروقؓ کی انداز حکمرانی سے اندازہ لگا سکتے ہیں کہ حاکمِ ریاست کی ذمہ دارہوتے ہیں ۔ سب سے اؤل بات کہ اللہ کو پائی پائی کاجواب دہ ہے مگر افسوس ہماری حکمران طبقہ "پڑھے لکھے جاہل” سے بد تر ہیں ان کو سمجھا سمجھا کر لوگ تھک جاتے ہیں مگر زرہ برابر بھی فرق اور احساس نہیں ہوتا ہے افسوس یہ لوگ اکثر کہا کرتے ہیں کہ وہ وقت اور تھا اور آج کا وقت اور ہے ۔
یہ سراسر غلط خود فریبی ہی ہے کیونکہ انسان کی بات کریں مگر کسی حد تک وہ بھی مجبوری ک تحت کہ وہ انسان ہو تھے اور آ ج کے انسان اور ہیں لیکن قران مجید میں اللہ فرماتے ہیں ” اے ایمان والوں! اللہ کی اطاعت کرو اور اللہ کے رسول ﷺ کی اطاعت کرو” بالکل وا ضح ہے کہ ہم کو اللہ اور اسکے رسول ﷺ کی ہی پیروی سے کرناہے اس کے علاوہ زرا برابر بھی گنجائش نہیں ہے
حضرت عمر فاروقؓ کی ساری نظریہ اور اعمال صرف اور صرف اللہ اور اللہ کے رسول ﷺ کی پیروی سے تعلق رکھتے ہیں خود مختار نہیں تھے نا ہی کوئی اپنی اعمال تیار کیا۔ جو حضور اکرم پاک ﷺ نے بتایا بالکل وہی کیا اور آج 14سو سال بعد بھی اگر ہم اس عظیم ہستی کی کردار کی تعریف ہی تعریف سنتے ہیں۔
ہمارے حکمران منافقت کی بادشاہی میں ہیں ۔ ان سے سچ بولا ہی نہیں جاتا ہے۔نہ کوئی قابل ذکر کردار ادا کرتے ہیں
کر لے ماضی بعید کو تم اپنی اے حکمرانوں!
نہ تھی زرا تجھے بھی تو روٹی کپڑا اور مکان
نہیں تھی زرا بساط تیری ہوگئی عوام مہربان
در حقیقت تو خادم اعلیٰ ہی ہے اور عوام تیری ہے حکمران
موجودہ صدراور وزیراعظم سے لیکر ان کے اتحادیوں تک کے لوگو ں کی کوئی قیمت ہی نہ ہوتی اگر عوام ان کو ووٹ نہ دیتی۔
جلال بادشاہی ہو کہ جمہوری تماشا ہو
جدا ہو دین سیاست سے تو رہ جاتی ہے چنگیزی
سیاست، صحافت ،معاشرت ،حکومت،فلاحی ادارے،عوامی ادارے، اور حفاظتی ادارے ،نظم و ضبط ، ضابطہ حیات و زندگی کے تمام معاملات میں اسلامی نظام آکسیجن کی مانند ہے ورنہ گمراہی ہی گمراہی ہے۔اسلامی سیاست سے منہ موڑنا ذلت رسوائی ہے جیسا آج کی سیاست و حکومت کی وجہ سے عوام اور حکمران زلیل و رسواہیں۔حکمران خود پریشان ہیں اورسکون کے لیے ساری ریاست ترس رہی ہے ۔ دن بدن عوامی مسائل میں اضافہ ہو ر رہا ھے۔ ہے۔ عوام کو اب اسلامی نظام کی طرف توجہ دینا چائیے۔ کیونکہ اسلامی ملک کا اسلامی نظام ہونا ضروری ہے۔اسلامی نظام میں حضرت عمر فاروق رضہ اللہ تعالی عنہ کا کردار ہمارے لیے مشعل راہ ہے ۔حکمرانوں کو اپنی گریبان میں جھانک کر دیکھنا چائیے کہ باتیں بڑی ہیں اور کردارصرف الفاظ بن کر سارے سیاستدانوں و حکمرانوں نکل رہی ہے ۔علماء کرام سے درخواست ہے وہ بھی سیاست کو نہیں نظام درست کرنے کے لیے ایک پلیٹ فارم پر جمع ہو جائیں۔
سب سے اہم سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ علماء کرام ایک پلیٹ فارم پر کیوں متحد نہیں ہیں؟ یہ سوال متحدہ مجلس عمل کے تمام ارکان سے ہے
ایک اتحاد بنایا گیا تو قبل از وقت کیوں اختلاف پیدا ہوئے ؟ آج تمام مذہبی جماعتیں فرقہ پرستی کی بنیاد پر کیوں سیاست کر رہے ہیں ؟
علماء کرام فرقہ واریت کی جنگ کا کیوں شکار ہیں ؟
بحر حال عمران خان ، الطاف حسین، زرداری، گیلانی ، راجہ ، چوہدری ، نواز شریف سمیت تمام اہم سیاستدان وحکمران مسلمان ضرور ہیں مگر عالم دین نہیں ۔ ان کو روز قیامت کا احتساب کا بھی علم ہے مگر احساس نہیں ہے،
لیکن عالم دین تمام حضرات مولانا فضل رحمن ، سید منور حسین ، حافظ سعید ، مولانا سمیع الحق سمیت تمام سیاستدان کیوں لاپر وائی کا مظا ہرہ کر رہے ہیں۔ کیا ان کو آج پاکستان کی حالات نظر نہیں آرہے ہیں؟ کیا اللہ سوال نہیں کریگا؟
اللہ سے ڈریں اور پاکستان کی حالت بدلنے کے لیے قران مجید سے نظام بنائیں۔ امریکہ پرستی بند کروائیں ۔ اگر نہیں ہوتا تو جہاد شروع کریں ۔ اس کے لیے تمام علماء کرام فرقہ واریت کو نظر انداز کر کے اسلامی جمہوریہ پاکستان کی حالت کو درست کرنے کے لیے متحد ہوجائیں۔ عمران خان ، الطاف حسین، زرداری، گیلانی ، راجہ ، چوہدری ، نواز شریف میں سے کوئی پاکستان کی حالت درست نہیں کر سکتا ہے ۔ صرف اسلامی نظام سے ہی ہمارے تمام مسائل حل ہو سکتے ہیں اگر علماء کرام میں اتحاد ہو سکتا ہے تب ایسا ممکن اور آسان بھی ہے۔

یہ بھی پڑھیں  جھنگ:صوبائی وزیر آبپاشی میاں یاورزمان کا سیلاب متاثرین خیمہ بستی کادورہ

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker