بین الاقوامیتازہ ترین

عورتوں کا شرمناک احتجاج جس میں باقی شہری بھی شامل ہوگئے

نیویارک (مانیٹرنگ سیل) عورتوں کیلئے مساوی حقوق کے سلسلہ میں وقتاً فوقتاً مختلف تحریکیں سامنے آتی ہی رہتی ہیں لیکن امریکہ میں خواتین نے اپنے ‘حقوق’ حاصل کرنے کیلئے نہایت غیر اخلاقی راستہ اپنایا ہے اور برہنہ ہوکر سڑکوں پر گھومنا شروع کردیا ہے۔ ”فری دی نپل“ نامی اس تحریک کا آغاز اس وقت ہوا جب مشہور اداکاروں بروس ولس اور ڈیمی مور کی 22 سالہ بیٹی سکاﺅٹ ولس نے برہنہ ہوکر نیویارک کی سڑکوں پر واک کی اور مختلف دکانوں پر جاکر خریداری بھی کی۔ سکاﺅٹ کو اس بات نے مشتعل کردیا تھا کہ ”انسٹاگرام“ نامی ویب سائٹ نے برہنہ تصویریں بھیجنے پر اس کا ویب سائٹ پر داخلہ بند کردیا تھا۔ سکاﺅٹ کا کہنا ہے کہ اس کا برہنہ ہوکر سڑکوں پر پھرنا دراصل انٹرنیٹ پر عورتوں کے خلاف بے جا پابندیوں کے خلاف احتجاج تھا۔ سکاﺅٹ کے اس عجیب و غریب احتجاج کے بعد نیویارک میں نوجوانوں کی بڑی تعداد نے یہ طریقہ اختیار کرلیا ہے اور خصوصاً نوجوان عورتوں کی بڑی تعداد گروہ در گروہ نیم برہنہ حالت میں سڑکوں پر آگئی ہے۔ ان خواتین کا یہ کہنا ہے کہ یہ بات ان کی سمجھ سے باہر ہے کہ جو بات مردوں کیلئے جائز ہے وہ عورتوں کیلئے ناجائز کیوں ہے۔ اگر مردوں کے جسم کے بالائی حصہ کے برہنہ ہونے سے کسی کے جذبات مشتعل نہیں ہوتے تو آخر عورتوں کے برہنہ پن کو اس قدر بڑا مسئلہ کیوں بنادیا گیا ہے۔ ان خواتین کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس قسم کی امتیازی پابندیوں سے خواتین کو ان کے اپنے ہی جسموں سے شرمندگی محسوس ہونا شروع ہوجاتی ہے۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
error: Content is Protected!!