امجد قریشیتازہ ترینکالم

زبان کاٹ دی جائے

amjad logoایک بادشاہ کسی شہر سے گزررہا تھا کہ راستے میں اُس نے ایک کمہار کے گدھوں کو لائن میں چلتے دیکھا وہ کسی کو لائن سے ادھر اُدھر نہ ہونے دیتا ٗبادشاہ نے کمہار کو روک لیا اور اُس سے پوچھا کہ تم اِن گدھوں کو کس طرح ایک لائن میں رکھتے ہوں کمہار نے جواب دیا حضور والا میں اِن میں سے جو لائن توڑتا ہے اُس کو سزا دیتا ہوں ٗبادشاہ بولا میرے ملک میں امن و امان قائم کرسکتے ہوں ؟ کمہار نے اثبات میں سر ہلایا اور بادشاہ کے ساتھ چل پڑا۔
دارالحکومت پہنچتے ہی کمہار نے عدالت لگا لی چور کا مقدمہ آیا تو اُسے مکمل سننے کے بعد ہاتھ کاٹنے کی سزا دی اور جلاد کو حکم صادر کردیا کہ اس کا ہاتھ کاٹا جائے جلاد نے اشارے سے وزیر اعظم کی طرف اشارہ کیا کہ یہ اِن کا خاص بندہ ہے ٗکمہار نے پھر حکم دیا کہ چور کا ہاتھ کاٹا جائے وزیر اعظم سمجھا کہ شاید اِس کو میری بات سمجھ نہیں آئی اور کمہار کے کان کے قریب جاکر سرگوشی میں کہا کہ یہ اپنا خاص بندہ ہے تو کمہار نے بطور جج فوراٰ فیصلہ دیا کہ وزیر اعظم کی زبان کاٹ دی جائے ٗبادشاہ نے فیصلہ پر عمل کرایا اور یوں ایک فیصلے سے ہی آگ و خون میں لپٹے ہوئے ملک میں امن و امان قائم ہوگیا۔
اگر دیکھا جائے تو یہ کہانی ہمارے معاشرے سے بہت زیادہ مماثلت رکھتی ہے ٗہم بلند و بانگ دعوے تو کرتے ہیں اور نعرہ بھی لگاتے ہیں کہ سب کے ساتھ انصاف ہوگا ہر کام میرٹ پر کیاجائے گا کسی کے ساتھ کسی بھی طرح کی ناانصافی نہیں ہوگی مگر عمل ندارد اور یہ دعوے صر ف دعوے ہی رہ جاتے ہیں ٗان سہانے اعلانات کے بعد تمام محکمہ جات اور خصوصاً عدالتوں غرضیکہ کے تمام انتظامی اداروں میں احکامات جاری کردئیے جاتے ہیں کہ سب کے ساتھ مساوی سلوک روا رکھا جائے اور روگردانی کی صورت میں سخت تادیبی کاروائی کی جائے گی مگر کیا واقعی ایسا ہو بھی پاتا ہے؟ انتہائی معذرت اور افسوس کے ساتھ انصاف صرف یہ لوگ اپنی مرضی کا مانگتے (یا یوں کہنا بجا ہوگا کہ انصاف صرف اپنے فائدے کا چاہتے ہیں)نوکریاں دینے کا اعلان کرنے کے بعد سفارشوں اور فون کالز کا لامتناہی سلسلہ شروع ہو جاتا ہے اور حق دار کو اُس کے حق سے محروم کرکے اپنے چہیتے اور من پسند لوگ بھرتی کرلئیے جاتے ہیں اور یو ں میرٹ کے اصولوں کے سرعام دھجیاں بکھیر دی جاتی ہیں ۔
عدالتوں میں کوئی کیس چلاجائے تو ہر طرح سے عدلیہ پر دباؤ ڈالا جاتا ہے کہ فیصلہ صرف اپنی مرضی کا حاصل کیا جائے اور عدلیہ دباؤ میں نہ آئے تو پھر اُس کی کردار کشی شروع کر دی جاتی ہے اور سخت نتائج کی دھمکیاں دی جاتی ہیں صرف کس لئیے کہ اپنی مرضی کا انصاف حاصل کیا جائے (جو کہ انصاف سے کوسوں دور ) یہ کیسا انصاف ہے کیا نعرے اور دعوے صرف اپنے رفقا و چہیتوں کیلئے ہی رہ گئے ہیں اور عام عوام کیلئے صرف دھکے گالیاں اور ذِلت؟۔
راقم کو بذات خوب بھی اِس چیز کا بخوبی علم ہے اور اِ س بات کا چشم دید گواہ بھی کے عام انسان کے ساتھ تھانوں میں کیا سلوک روارکھا جاتا ہے کوئی بھی کام میرٹ پر نہیں ہوتا صرف پیسہ سے کیاجاتا ہے اور اپنے حق پر ہوتے ہوئے بھی اگر آپ کے پاس رشوت کی رقم نہ ہو یا کوئی انتہائی مضبوط سفارش موجود نہ ہو تو پھر آپ ہزارہا کوشش کرلیں آپ کی ایف آئی آر درج نہیں ہوگی اور آپ کو ذلیل و خوار کرکے ر کھ دیا جاتا ہے ٗ اگر میرسے اس کالم کے بعد پنجاب کے خادم اعلیٰ چاہے تو میں تمام دستاویز اور ثبوت بھی فراہم کرسکتا ہوں کہ کس طرح اور کیسے انصاف کی دھجیاں بکھیری جا رہی ہیں۔
خیر باتوں میں بات کہا ں سے کہاں تک چلی گئی ٗلیکن صاحبو یہ ایک بہت بڑی حقیقت ہے کہ جب تک انصاف کے مواقع سب کیلئے یکساں نہیں فراہم کئیے جائیں گے تب تک معاشرے میں استحکام کا پیدا ہونا نا ممکن ہی ہے ٗاور یہی اسی صورت میں ممکن ہوگا جب انصاف کی راہ میں رکاوٹ ڈالنے والوں کی زبان کاٹ دی جائے خواہ وہ کتنے ہی بااثر ہی کیوں نہ ہوں۔
ایک انتہائی مشہور اسلامی کہاوت ہے۔ کفر پر مبنی حکومت تو قائم رہ سکتی ہے مگر ظلم و ناانصافی پر نہیں۔note

یہ بھی پڑھیں  پی ٹی آئی میں اختلافات سامنےآنے لگے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker