پاکستانتازہ ترین

ذوالفقار مرزا کو کوئی حق نہیں پہنچتا کہ وہ آصف زرداری کے خلاف کوئی بات کریں،میر نادر مگسی

کراچی (نامہ نگار) پاکستان پیپلز پارٹی کے رکن سندھ اسمبلی اورسابق صوبائی وزیر میر نادر مگسی نے کہا ہے کہ سابق وزیر داخلہ سندھ ذوالفقار مرزا کو کوئی حق نہیں پہنچتا کہ وہ پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کے خلاف کوئی بات کریں۔ ذوالفقار مرزا ہمارے دوست ضرور ہیں اور میں تمام معاملات کو افہام تفہیم سے حل کروانے کے لئے تیار ہوں لیکن اگر انہوں نے آصف علی زرداری کے خلاف بیان بازی بند نہ کی تو میں ان کے مخالف کھڑا نظر آؤں گا۔ ذوالفقار مرزا ہمارے اپنے گھر کے ہیں اور ہم ان کو جن جن مسائل کا سامنا پے اس پر آصف علی زرداری کے ساتھ بیٹھ کر حل کرواسکتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کو سندھ اسمبلی میں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔ میر نادر مگسی نے کہا کہ مجھے انتہاہی افسوس ہوا کہ جب میں نے مختلف نجی ٹی وی چینلز پر ذوالفقار مرزا کو ہماری پارٹی کے شریک چیئرمین اور میرے دوست آصف علی زرداری کے خلاف بات کرتے ہوئے دیکھا۔ انہوں نے کہا کہ ذوالفقار مرزا کو کوئی حق نہیں کہ وہ آصف علی زرداری کے خلاف اس طرح کی باتیں کریں۔ انہوں نے کہا کہ میں آصف علی زرداری اور ذوالفقار مرزا کے درمیان مصالحت کے لئے اپنا کردار ادا کرنے کے لئے تیار ہوں کیونکہ ذوالفقار مرزا ہمارے اپنے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مجھے اس بات کا شدید افسوس ہوا ہے کہ ذوالفقار مرزا نے آصف علی زرداری کے خلاف بیان بازی کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں ذوالفقار مرزا پر واضح کرنا چاہتا ہوں کہ وہ ہم میں سے ہیں اور یہ معاملہ ہمارے گھر کا ہے اور وہ اس پر بیٹھ کر بات کریں اور اس میں میں ان کو مکمل سپورٹ کرسکتا ہوں تاہم اگر انہوں نے پارٹی کے شریک چیئرمین کے خلاف بیان بازی بند نہ کی تو میں ان کے مخالف کھڑا انہیں نظر آؤں گا۔ ایک سوال کے جواب میں میر نادر مگسی نے کہا کہ مسائل اور بالخصوص اپنے حلقہ انتخاب میں مشکلات کا سامنا مجھے بھی ہے اور ان مسائل کا حل ایک پارٹی کی حیثیت سے بات چیت کے ذریعے کیا جاسکتا ہے۔ ایک اورسوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ آصف علی زرداری نے کسی بھی میڈیا پر آکر ذوالفقار مرزا کے خلاف کوئی بات نہیں کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ذوالفقار مرزا کو یہ زیب نہیں دیتا کہ وہ میڈیا یا کسی اور فورم پر پارتی کے شریک چیئرمین کے خلاف بات کریں۔ انہوں نے کہا کہ میرا ذوالفقار کو مشورہ ہے کہ چونکہ وہ ہمارے گھر کے ہیں اور اگر انہیں کسی بھی قسم کے مسائل ہیں تو وہ اس کو افہام تفہیم سے اور بات چیت سے حل کریں اور کسی پر اس طرح تنقید کرکے اپنے آپ کو چھوٹا نہ بنائیں

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
error: Content is Protected!!